.

سعودی عرب نے روسی جمہوریہ چیچنیا میں چرچ پر حملے کی شدید مذمت کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب نے روس کی جمہوریہ چیچنیا میں ایک چرچ پر مسلح افراد کے حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔اس حملے میں تین افراد مارے گئے ہیں ۔

سعودی عرب کی سرکاری خبررساں ایجنسی ایس پی اے کے مطابق وزارت خارجہ کے ایک ذریعے نے مملکت کی جانب سے بم دھماکے میں انسانی جانوں کے ضیاع پر متاثرہ خاندانوں ، روسی فیڈریشن کی حکومت اور عوام سے گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے اور یہ بات زور دے کر کہی ہے کہ سعودی عرب تشدد ، انتہا پسندی اور دہشت گردی کی تمام شکلوں کو مسترد کرتا ہے۔

روس کی ایک تحقیقاتی کمیٹی کے بیان کے مطابق ہفتے کے روز چیچنیا کے دارالحکومت گروزنی میں واقع آرتھو ڈکس چرچ پر آتشیں ہتھیاروں سے مسلح چار افراد نے حملہ کیا تھا جس کے نتیجے میں دو پولیس اہلکاروں سمیت تین افراد مارے گئے تھے۔ سکیورٹی اہلکاروں نے چاروں حملہ آوروں کو بھی موقع پر ہلاک کردیا تھا۔

داعش نے اس حملے کی ذمے داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا ہے لیکن اس کے حق میں کوئی ثبوت نہیں پیش کیا ہے۔داعش کی آن لائن خبررساں ایجنسی اعماق نے اتوار کو ایک بیان میں کہا کہ ’’ دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں نے گروزنی میں واقع مائیکل چرچ پر حملہ کیا تھا‘‘۔

چیچنیا کے لیڈر رمضان قادریوف کا کہنا ہے کہ ان چاروں حملہ آوروں کی شناخت ہوگئی ہے۔ان میں تین چیچن ہی تھے اور ان کی عمریں 18 اور 19 سال کے درمیان تھیں۔ان کا سرغنہ ہمسایہ جمہوریہ انگشتیا سے تعلق رکھتا تھا۔قادریوف نے انٹیلی جنس ڈیٹا کے حوالے سے کہا ہے کہ ان دہشت گردو ں کو ایک مغربی ملک سے حملے کی ہدایات ملی تھیں۔