.

سعودی عرب میں اصلاحات پر عمل درامد میں اچھی پیش رفت جاری ہے: آئی ایم ایف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے توقع ظاہر کی ہے کہ رواں برس سعودی عرب کی شرح نمو میں بہتری دیکھنے میں آئے گی۔

فنڈ کے ماہرین نے مملکت کے مشاورتی مشن کے دورے کے اختتام پر جاری بیان میں کہا ہے کہ سعودی عرب میں ویژن 2030 پروگرام کی روشنی میں اصلاحات کے پروگرام پر عمل درامد کے حوالے سے اچھی پیش رفت جاری ہے۔ تاہم ماہرین نے مطالبہ کیا کہ تیل کی قیمتوں میں اضافے کے ساتھ حکومتی اخراجات میں از سر نو توسیع سے گریز کیا جائے۔

آئی ایم ایف نے سعودی عرب میں ویلیو ایڈڈ ٹیکس VAT کے نفاذ کا خیر مقدم کرتے ہوئے اسے مملکت میں ٹیکس کلچر کی مضبوطی کے سلسلے میں اہم کامیابی قرار دیا۔

فنڈ نے حالیہ عرصے میں سعودی عرب میں توانائی کے نرخوں کے حوالے سے اصلاحات کو بھی سراہتے ہوئے زور دیا کہ توانائی کی قیمتوں میں بتدریج اضافہ جاری رہنا چاہیے۔

فنڈ کے مطابق مملکت میں نجکاری اور سرکاری اور نجی سیکٹروں کے درمیان شراکت داری کے پروگرام کی رفتار تیز کرنے پر بھی کام کیا جانا چاہیے۔

آئی ایم ایف نے اس جانب اشارہ کیا کہ مملکت کاروباری ماحول کو بہتر بنانے کی سمت آگے بڑھ رہی ہے۔ علاوہ ازیں انسداد بدعنوانی کی پالیسیوں کو مضبوط بنانے کے لیے سرکاری سطح پر خرید کے نظام کو بھی جدید بنایا گیا ہے۔