.

ایران حوثی باغیوں کی زیادہ دیر تک مدد نہیں کر سکے گا: امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا نے یمن اور دوسرے عرب ملکوں میں ایران کی کھلم کھلا مداخلت کو ایک بار پھر کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ امریکی حکومت کا کہنا ہے کہ ایران خطے میں دہشت گردوں کی مدد اور یمن میں حوثی باغیوں کی امداد زیادہ دیر تک جاری نہیں رکھ سکے گا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یمن میں متعین امریکی سفیر میتھیو ٹولر نے یمنی وزیراعظم احمد بن دغر سے ملاقات میں کہا کہ ایران کی جانب سے حوثی باغیوں کو سعودی عرب پر حملوں اور عالمی آبی ٹریفک کو نشانہ بنانے کے بیلسٹک میزائل مہیا کرنا ناقابل قبول ہے۔

ملاقات میں ایران کے خطے میں تخریبی کردار اور اسے روکنے کے لیے ہونے والی مساعی پر بات چیت کی گئی۔ اس موقع پر یمنی وزیراعظم نے کہا کہ ایران حوثی باغیوں کو اسلحہ اور گولہ بارود فراہم کرکے سلامتی کونسل کی یمن کے لیے قرارداد 2216 کی کھلم کھلا خلاف ورزی کا مرتکب ہو رہا ہے۔

بن دغر نے یمن میں جاری بغاوت میں ایران کے تخریبی کردار اور خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے کی ایرانی سازشوں کے خلاف امریکی حکمت عملی کو سراہا۔

اس موقع پر امریکی سفیر نے کہا کہ ایران زیادہ دیر تک حوثی باغیوں کی مدد جاری نہیں رکھ سکے گا۔ جب کہ وزیر اعظم بن دغر نے کہا کہ حوثی باغی ایران کی ایماء پر اپنی قوم کا قتل کر رہے ہیں۔ ایران باغیوں کی مدد سے پڑوسی ملکوں اور عالمی برادری کو بلیک میل کر رہا ہے مگر اسے خطے میں اپنے توسیع پسندانہ عزائم کی ناکامی پر سخت مایوسی ہوگی۔