یونان میں مقدونیہ کا نام تبدیل کرنے پر احتجاج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

یونان کے دوسرے بڑے شہر تھیسالونیکی میں پیر کے روز درجنوں شہریوں کی پولیس کے ساتھ جھڑپ ہو گئی۔ جھڑپ کا آغاز اُس وقت ہوا جب مذکورہ شہریوں نے حکم راں جماعت سیریزا پارٹی کی جانب سے منعقد کیے گئے ایک اجلاس پر دھاوا بولنے کی کوشش کی۔ اجلاس میں مقدونیا کے نام کی تبدیلی کے معاہدے کی خصوصیات کو پیش کیا جانا تھا۔

یونان اور مقدونیہ نے رواں ماہ ایک معاہدے پر دستخط کیے جس کے تحت جمہوریہ یوگوسلاویہ کا نام تبدیل کر کے "شمالی جمہوریہ مقدونیہ" کر دیا گیا ہے۔ اس معاہدے نے فریقین کے درمیان کئی دہائیوں سے جاری تنازع پر روک لگا دی ہے تاہم دوسری جانب سرحد کے دونوں جانب اس پیش رفت پر احتجاج کا سلسلہ بھڑک اٹھا۔

اجلاس کے ہال پر دھاوا بولنے والوں میں بعض نے اپنے جسموں کے گرد یونان کا پرچم لپیٹا ہوا تھا۔ انہوں نے "مقدونیہ یونانی ہے" کے نعرے لگائے اور پولیس پھر پتھراؤ بھی کیا۔ اس کے نتیجے میں انسداد ہنگامہ آرائی کی فورس آنسو گیس کا استعمال کرنے پر مجبور ہو گئی۔

حالیہ دنوں میں سامنے آنے والے ایک سروے سے ظاہر ہوتا ہے کہ 70 فی صد یونانیوں نے مقدونیہ کا نام تبدیل کرنے سے متعلق معاہدے کو مسترد کر دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں