32 مریض خواتین کے ریپ کے جرم میں فرانسیسی ڈاکٹر کو10 سال قید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

فرانس کی ایک فوج داری عدالت نے گذشتہ برس ایک اسپتال میں 32 خواتین مریضوں کی آبرو ریزی کے جرم میں ایک مقامی ڈاکٹر کو دس سال قید کی سزا سنائی ہے۔

سزا پانے والے 68 سالہ ڈاکٹر ٹییری ڈاساس وسطی فرانس کے علاقے ارگان۔سور۔ سلوڈر‘ میں سابق سرکاری ڈاکٹر رہ چکے ہیں۔ ان پر انگلی اور طبی آلات کی مدد سے بتیس خواتین کے ریپ کا الزام عاید کیا گیا ہے۔

ملزم پر خواتین کے طبی معائنے کے دوران ان کی تصاویر بنا کر ان کی پرائیویسی میں مداخلت کرنے کا بھی الزام عاید کیا گیا ہے۔

عدالت نے چار خواتین کی طرف سے آبرو ریزی کے الزامات میں ملزم کو بری کردیا ہے۔ فرانسیسی پراسیکیوٹر جنرل نے ملزم کو 18 سال قید کی سفارش کی تھی اور کہا تھا کہ ملزم نے خواتین کی اجازت کے بغیر ان کی تصاویر بنائیں۔ تین ہفتے تک جاری رہنے والے ٹرائل کے دوران ملزم نے ریپ کےالزام کی سختی سے تردید کی ہے۔

ملزم کو دس سال قید کے ساتھ تا حیات طب کے پیشے پر پابندی اور مسلسل 10 سال تک علاقے سے باہر نہ جانے کی سزا دی گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں