پاکستانی وکیل جاوید رحمن ایران میں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے نمائندے مقرّر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اقوام متحدہ کے زیر انتظام انسانی حقوق کی کونسل نے پاکستانی وکیل جاوید رحمن (51 سالہ) کو ایران میں انسانی حقوق کی نگرانی کے لیے اپنا خصوصی نمائندہ مقرر کرنے کا اعلان کیا ہے۔

ایڈوکیٹ جاوید رحمن کا انتخاب جمعے کے روز انسانی حقوق کی کونسل میں ووٹنگ کے ذریعے عمل میں آیا۔ پاکستانی وکیل برطانوی شہریت کے حامل ہیں اور لندن کی Brunel University میں پروفیسر کے طور پر کام کرتے ہیں۔

جاوید رحمن اقوام متحدہ میں اقلیتوں کے امور کے فورمز کے ساتھ کام کر چکے ہیں اور انہوں نے ایمنسٹی انٹرنیشنل جیسی انسانی حقوق کا دفاع کرنے والی تنظیموں کے ساتھ بھی تعاون کیا۔

وہ پاکستان میں انسانی حقوق کے سرگرم کارکن شمار کیے جاتے ہیں۔ بالخصوص اسلامی قوانین، مذاہب کی آزادی کے امور اور انسداد دہشت گردی کے میدان میں کام کر چکے ہیں۔

جاوید رحمن نے پاکستانی وکیل عاصمہ جہانگیر کی جگہ یہ عہدہ سنبھالا ہے۔ عاصمہ نے نومبر 2016ء سے 11 فروری 2018ء کو اپنی وفات تک ایران میں انسانی حقوق کے لیے اقوام متحدہ کی خصوصی نمائندہ کے طور پر کام کیا۔

یاد رہے کہ ایران نے 2005ء کے بعد سے اقوام متحدہ کے مقرر کردہ کسی بھی نمائندے کو ایران کا دورہ کرنے کی اجازت نہیں دی۔ انسانی حقوق کا دفاع کرنے والی جن شخصیات نے اقوام متحدہ کے زیر انتظام انسانی حقوق کے اداروں سے رابطے کیے انہیں ایرانی حکام کی جانب سے انتقامی کارروائیوں کا نشانہ بنایا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں