.

امریکی وزیر خارجہ کا اچانک افغانستان کا دورہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو افغانستان کے اچانک اور غیر اعلانیہ دورے پر کابل پہنچ گئے۔ افغان حکام کا کہنا ہے کہ وزارت خارجہ کا عہدہ سنبھالنے کے بعد مائیک پومپیو کا یہ پہلا اور اچانک افغانستان کا دورہ ہے۔

'سی آئی اے' کے سابق چیف اور موجودہ امریکی وزیرخارجہ نے کابل میں صدر اشرف غنی سے ملاقات کی جس کے بعد دونوں نے ایوان صدر میں ایک پریس کانفرنس سے بھی خطاب کیا۔

خیال رہے کہ افغانستان میں 17 سال سے جاری جنگ کے دوران ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ طالبان اور حکومت نے عیدالفطر پر ایک ساتھ جنگ بندی کا اعلان کیا تھا۔ طالبان کی طرف سے عارضی جنگ بندی کے اعلان کو مقامی اور عالمی سطح پر سراہا گیا تھا تاہم تحریک طالبان افغانستان نے جنگ بندی کی مدت میں توسیع نہیں کی۔

صدر اشرف غنی نے یک طرفہ طور پر جنگ بندی کی مدت 30 جون تک بڑھا دی تھی۔

کابل سے ایک سینیر سیکیورٹی ذریعے نے شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ اگرچہ طالبان کی طرف سے جنگ بندی ختم کردی گئی ہے مگر اب جنگجوئوں کے حملوں میں غیرمعمولی کمی دیکھی گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ طالبان کی طرف سے بالعموم پورے ملک بالخصوص جنوبی اور جنوب مشرقی علاقوں میں حملے کم کردیے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ جنگ بندی سے قبل بیس دنوں میں طالبان کی طرف سے 224 بم دھماکے کیے گئے تھے جب کہ جنگ بندی ختم ہونے کے بعد 148 حملے کیے گئےہیں۔ دو روز قبل ایک افغان فوجی نے امریکی فوجیوں پر فائرنگ کردی تھی جس کے نتیجے میں ایک اہلکار ہلاک اور 2 زخمی ہوگئے تھے۔