.

’بریگزٹ‘ پر اختلافات، ایک اور برطانوی وزیر مستعفی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ کی یورپی یونین سے علاحدگی کے اعلان کے بعد وزیراعظم ٹریزا مے کی کابینہ میں اختلافات اور وزراء کے استعفوں میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

اطلاعات کے مطابق برطانیہ کے وزیر مملکت برائے دفاع جوٹو بیب نے بھی وزارت کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ بیب کی جانب سے استعفیٰ کسٹم سے متعلق بل میں ترمیم کے خلاف رائے شماری پر دیا گیا ہے۔ بل میں ترمیم کے خلاف رائے شماری برطانیہ کی پوری یونین سے علاحدگی کے منصوبے کا حصہ ہے۔

وزیر مملکت برائے دفاعی پیداوار بیب نے ترمیم کے خلاف ووٹ دیا۔ یہ قانون ’بریگزٹ‘ کے بعد برطانیہ کو یورپی یونین کی مصنوعات پر کسٹم ٹیکس لاگو کرنے سے روک دے گا۔

گذشتہ روز برطانوی پارلیمنٹ میں ترمیم کے حق میں ہونے والی رائے شماری میں معمولی اکثریت کے ساتھ ترمیم منظور کر لی گئی۔

خیال رہے کہ برطانیہ کی یورپی یونین سے علاحدگی کے معاملے کے لیے مقرر کردہ وزیر ڈیوڈ ڈیوس اور سابق وزیر خارجہ بوریس جونسن بھی وزیراعظم ٹریزا کی بریگزٹ کے بعد یورپی یونین سے مضبوط اقتصادی تعلقات برقرار رکھنے پر بہ طور احتجاج استعفیٰ دے چکے ہیں۔