مظاہرے میں شریک شخص کو زدوکوب کرنے والا فرانسیسی صدر کا ذاتی محافظ برطرف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فرانسیسی صدر امانوئل ماکروں نے اپنے اُس ذاتی محافظ کی برطرفی کا فیصلہ کیا ہے جس کو ایک وڈیو ریکارڈنگ میں یکم مئی کو احتجاجی مظاہرے کے دوران ایک شخص کو زدوکوب کرتے ہوئے دیکھا گیا تھا۔ یہ بات جمعے کے روز فرانسیسی صدر کے دفتر کی جانب سے جاری ایک بیان میں بتائی گئی۔

استغاثہ نے اپنے بیان میں بتایا ہے کہ فرانسیسی پولیس نے جمعرات کے روز مذکورہ شخص سے اس واقعے کے حوالے سے پوچھ گچھ کی۔

فرانسیسی اخبار "لو موند" نے انکشاف کیا تھا کہ صدر ماکروں کے دفتر نے احتجاج میں شریک ایک شخص کو مارنے پر مذکورہ ذاتی محافظ کو مختصر مدت کے لیے کام سے روک دیا تھا۔ اس انکشاف کے بعد فرانسیسی صدر کو کڑی تنقید کا نشانہ بننا پڑا۔

صدارتی محل کے ایک ذمّے دار نے برطانوی خبر رساں ایجنسی کو بتایا کہ "صدر کو مذکورہ اہل کار کے تصرّف کے حوالے سے نئے حقائق سے آگاہ کیا گیا۔ اس کے نتیجے میں ایوان صدارت نے الیگزینڈر پینالا کو برطرف کرنے کے اقدامات کا آغاز کیا"۔

اس حوالے سے زیر گردش وڈیو میں صدر کا ذاتی محافظ الیگزیںڈر یکم مئی کو مظاہرے میں شریک ایک خاتون کو گھسیٹ کر دور لے جاتا ہوا دکھائی دیا۔ اس کے بعد الیگزینڈر نے احتجاج کنندگان میں شریک ایک شخص کو زدوکوب کیا۔

فرانس میں حزب اختلاف کے رہ نماؤں نے صدر امانوئل ماکروں کو تنقید کا نشانہ بنایا کیوں کہ انہوں نے واقعے کے بعد فوری طور پر ذمّے دار اہل کار کو برطرف نہیں کیا اور خاموشی اختیار کی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں