ایران: خشک سالی کے سبب پستے کی پیداوار شدید متاثر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایران میں خشک سالی اور ماحولیات میں تبدیلی کے سبب پستے کی پیداوار میں 80% تک کی غیر مسبوق کمی واقع ہوئی ہے۔ یہ بات Iranian Pistachio Society کے ڈائریکٹر محسن جلال پور نے بتائی۔

خشک سالی اور پانی کی قلت نے عمومی صورت میں ایرانی کاشت کی برآمد کو متاثر کیا ہے۔ اس واسطے حکومت نے کسانوں کو چاول جیسی بعض چیزیں کاشت کرنے سے روک دیا ہے جن کے لیے پانی کی کثیر مقدار کی ضرورت پڑتی ہے۔

اس سے قبل ایران کا صوبہ کرمان دنیا بھر میں پستے کا مرکز جانا جاتا تھا۔ تاہم آج یہ خطاب صرف امریکی ریاست کیلیفورنیا کے واسطے مناسب نظر آتا ہے۔

جلال پور نے نیوز ایجنسی اِیسنا کو بتایا کہ امریکا نے گزشتہ برس 2.2 لاکھ ٹن پستے کی پیداوار کو ممکن بنایا جب کہ ایران 1.44 لاکھ ٹن سے زیادہ تیار نہیں کر سکا۔

یاد رہے کہ 1990ء کی دہائی میں ایران کی پستے کی سالانہ پیداوار 2.5 لاکھ ٹن سے کم نہیں ہوا کرتی تھی۔ تاہم گزشتہ برس یہ کم ہو کر تقریبا نصف رہ گئی۔ ایرانی عہدے دار کے انکشاف کے مطابق رواں برس اس غذائی مواد کی پیداوار میں غیر معمولی نوعیت کی کمی دیکھنے میں آئے گی۔

ایران کو رواں برس بارشوں کی کمی کا سامنا ہے جو گزشتہ پچاس برس میں سنگین ترین نوعیت کی قلت ہے۔

ایران میں عبادان اور المحمرہ جیسے شہروں میں پینے کے پانی کی شدید قلت کے سبب بڑے عوامی مظاہرے بھڑک اٹھے تھے۔ ایران میں بعض عہدے داران نے انکشاف کیا تھا کہ ملک میں بالخصوص جنوبی صوبوں میں پینے کے پانی کا بحران جاری رہے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں