سعودی آئیل ٹینکر وں پر حملے کے بعد الحدیدہ کی آزادی ناگزیر ہوگئی: اماراتی وزیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت برائے امور خارجہ انور قرقاش نے کہا ہے کہ بحیرہ احمر میں سعودی عرب کے دو آئیل ٹینکروں پر یمن کے حوثی شیعہ باغیوں کے حملے کے بعد الحدیدہ کی بندرگاہ کو آزاد کرانا ناگزیر ہوگیا ہے۔

ایران کے حمایت یافتہ حوثی باغیوں نے یمن کی ساحلی حدود میں سعودی عرب کے دو بڑے تیل بردار بحری جہازوں پر حملہ کیا تھا جس سے انھیں معمولی نقصان پہنچا تھا۔

انور قرقاش نے جمعرات کو ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ ’’حوثی ملیشیا کی دہشت گردی کی اس کارروائی کے بعد ان کے زیر قبضہ الحدیدہ کی بندر گاہ کو آزاد کرانا ضروری ہوگیا ہے‘‘۔

وہ مزید لکھتے ہیں کہ ’’تیل ٹینکروں اور مال بردار جہازو ں پر (یمن کی بحری حدود میں ) اس طرح کے منظم حملے دہشت گردی ہیں اور یہ حوثیوں کی جارحانہ فطرت کو ظاہر کرتے ہیں ‘‘۔

انھوں نے ایران کے حوالے سے کہا ہے کہ ’’ ہمیں ایران سے متعلق یورپ اور امریکا کے نقطہ نظر میں اختلافات پر تشویش لاحق ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں