.

ماسکو میں امریکی سفارت خانے میں روسی خاتون جاسوس کا انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جمعرات کو سامنے آنے والی متعدد میڈیا رپورٹوں کے مطابق امریکی انتظامیہ کو شبہہ ہے کہ ماسکو میں امریکی سفارت خانے میں 10 برس سے زیادہ کام کرنے والی روسی اہل کار اپنے ملک کے لیے جاسوسی کر رہی تھی۔

امریکی ٹی وی نیٹ ورک "CNN" نے امریکی انتظامیہ کے ایک ذمّے دار کے حوالے سے بتایا ہے کہ جاسوس خاتون جس کو خفیہ ادارے "Secret Surface" کی جانب سے بھرتی کیا گیا تھا، 2016ء تک بنا کسی شک و شبہات کے کام کرتی رہی۔ مذکورہ خفیہ ادارہ امریکی سرزمین اور بیرون ملک تحفظ اور تحقیقات کی سرگرمیاں انجام دینے کا ذمّے دار ہے۔

معمول کی تفتیش کے دوران امریکی حکام کو انکشاف ہوا کہ روسی خاتون نے باقاعدگی کے ساتھ روسی انٹیلی جنس ادارے "FSB" کے ساتھ گفتگو انجام دی جس کی اُسے اجازت تھی۔

برطانوی اخبار "گارڈین" کے مطابق اس خاتون نے ممکنہ طور پر خفیہ معلومات حاصل کر لی ہوں گی۔

امریکی انتظامیہ کے ایک بڑے عہدے دار نے CNN کو بتایا کہ روسی خاتون کے انتہائی خفیہ معلومات تک پہنچنے کے امکانات نہیں تھے تاہم اس نے ضرورت سے زیادہ معلومات فراہم کیں۔

گزشتہ موسم گرما میں امریکی وزارت خارجہ کی جانب سے سکیورٹی پرمٹ واپس لے لیے جانے کے بعد اس روسی خاتون کو برخاست کر دیا گیا۔

واضح رہے کہ امریکا اور روس کے درمیان تعلقات انتہائی کشیدہ ہیں۔ بالخصوص 2016ء میں صدارتی انتخامات کی مہم اور امریکی انٹیلی جنس کی جانب سے ماسکو پر انتخابات میں مداخلت کے الزام کے وقت سے دونوں ملکوں کے بیچ تناؤ دیکھا جا رہا ہے۔