وینزویلا کے صدر نے خود پر قاتلانہ حملے کی ذمّے داری دو ممالک پر ڈال دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

وینزویلا کے صدر نکولس مدورو نے اس امر کی تصدیق کی ہے کہ وہ ہفتے کے روز دھماکا خیز مواد کے حامل ڈرون طیاروں کے ذریعے کیے جانے والے قاتلانہ حملے میں محفوظ رہے۔ انہوں نے اس کارروائی کو دائیں بازو کی سازش قرار دیتے ہوئے کولمبیا اور امریکا کو ملامت کا نشانہ بنایا۔

صدر مدورو ہفتے کے روز دارالحکومت کراکس میں ایک عسکری تقریب سے خطاب کر رہے تھے کہ اس دوران اُن کے نزدیک دھماکے ہوئے جس کے بعد مدورو نے اپنا خطاب روک دیا۔

مدورو نے سرکاری ٹیلی وژن پر جاری بیان میں کہا کہ "مجھے اس میں ذرہ برابر شک نہیں کہ حملے کے پیچھے خوان مانوئل سانتوس (کولمبیا کے صدر) کا ہاتھ ہے"۔

وینزویلا کے صدر کے مطابق سازش کی ابتدائی تحقیقات یہ بتاتی ہیں کہ ہفتے کے روز ہونے والے حملے کی منصوبہ بندی پڑوسی ملک کولمبیا میں ہوئی اور حملے کے کئی منصوبہ ساز امریکی ریاست فلوریڈا میں رہتے ہیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ ٹرمپ انتظامیہ اس معاملے میں تعاون کرے گی۔

وینزویلا کی وزارت اطلاعات کے مطابق ہفتے کے روز صدر مدورو کو نشانہ بنانے کے سلسلے میں ڈرون طیاروں کے دھماکوں میں نیشنل گارڈز کے 7 فوجی اہل کار زخمی ہو گئے۔ اس دوران وسیع فوجی پریڈ سے صدر مدورو کا ٹیلی وژن خطاب بھی منقطع ہو گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں