.

افغانستان: طالبان کا سرکاری فوج کے اڈے پر حملہ ، درجنوں فوجی قید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغانستان میں طالبان تحریک کے عناصر نے ملک کے شمال میں واقع فوجی اڈّے پر حملہ کر کے کم از کم 10 افغان فوجیوں کو ہلاک اور 15 کو زخمی کر دیا۔ مقامی ذمّے داران نے منگل کے روز بتایا کہ گزشتہ دو روز میں لڑائی کے دوران درجنوں افغان فوجیوں کو قیدی بھی بنا لیا گیا۔

افغانستان کے صوبے فاریاب کی کونسل کے سربراہ محمد طاہر رحمانی کا کہنا ہے کہ "طالبان نے اتوار کے روز سے شروع ہونے والے حملے میں غورماچ کے علاقے میں واقع فوجی اڈے میں موجود ٹینکوں اور گولہ بارود پر قبضہ کر لیا ہے۔ ہم اڈے میں داخل نہیں ہو سکے اور اس کا بڑا حصّہ ابھی تک طالبان کے زیر کنٹرول ہے"۔

علاقائی عہدے دار کے مطابق طالبان نے 40 افغان فوجیوں کو قیدی بنا لیا جب کہ لڑائی میں اُس کے اپنے 30 مسلح ارکان ہلاک ہوئے۔

افغانستان کے شمال میں طالبان کا یہ حملہ ایسے وقت میں ہوا جب کہ ملک کے جنوب مشرق میں غزنی صوبے میں جھڑپوں کا سلسلہ جاری ہے۔ گزشتہ ہفتے شروع ہونے والی جھڑپوں میں اب تک سیکڑوں افراد ہلاک اور زخمی ہو چکے ہیں۔ اس دوران افغان فوج کو امریکی جنگی طیاروں کی معاونت حاصل ہے۔

غزنی سے فرار ہونے والے افغان شہریوں کا کہنا ہے کہ لڑائی کے نتیجے میں شہر میں بجلی اور پانی کی فراہمی کا سلسلہ منقطع ہو گیا ہے اور ہر طرف تباہی اور بربادی پھیلی ہوئی ہے۔