نئے ترقیاتی منصوبےکے تحت50 لاکھ عازمینِ حج کی میزبانی چاہتے ہیں: شہزادہ خالد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

گورنر مکہ اور سعودی عرب کی مرکزی حج کمیٹی کے صدر شہزادہ خالد الفیصل نے کہا ہے کہ اس سال ڈھائی لاکھ سے زیادہ سکیورٹی اہلکاروں نے حج کے دوران میں خدمات انجام دی ہیں اور کسی داخلی اجازت نامے کے بغیر آنے والے حجاج کی تعداد ایک لاکھ دس ہزار تک پہنچ گئی تھی۔

انھوں نے جمعرات کو ایک نیوز کانفرنس میں بتایا ہے کہ مسجد الحرام اور دوسرے مقامات پر 135 صحت مراکز میں 32 ہزار سے زیادہ ڈاکٹروں اور طبی عملہ کے اہلکاروں نے خدمات انجام دی ہیں۔

گورنر مکہ نے بتایا ہے کہ مرکزی حج کمیٹی مقدس مقامات کے ترقیاتی منصوبے کے تحت ’’اسمارٹ حج‘‘ پروگرام کو اپنا ئے گی ۔اس کے تحت پچاس لاکھ عازمین حج کی میزبانی کا انتظام کیا جائے گا۔اس مرتبہ تمام حجاج کرام کے پاس ان کے تحفظ کے لیے برقی بریسلیٹ مہیا کیے گئے تھے۔

شہزادہ خالد نے صحافیوں کو آیندہ سال سے شروع کیے جانے والے حج منصوبوں کے خدوخال کے بارے میں بھی بتایا ہے اور اس توقع کا اظہار کیا ہے کہ مقدس مقامات کے ترقیاتی منصوبے پر آیندہ سال سے عمل درآمد کا آغاز کردیا جائے گا۔نیز مرکزی حج کمیٹی آیندہ ہفتےسے ہی اگلے سال کے حج کے لیے تیاریاں شرو ع کردے گی۔

انھوں نے میڈیا کے کردار کو بھی سراہا جس نے اس سال حج سیزن کی کامیابی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

شہزادہ خالد نے کہا کہ ہم عازمین ِ حج کی سعودی عرب میں داخلے میں سہولت کاری کے منصوبے پر عمل درآمد کے لیے مزید ممالک سے رابطے کررہے ہیں ۔تاہم انھوں نے واضح کیا ہے کہ کسی ملک کے عازمین پر عمر کی کوئی قید نہیں لگائی جائے گی۔

انھوں نے بدھ کو العربیہ نیوز چینل سےایک انٹرویو میں کہا تھا کہ ’’ گذشتہ برسوں کے مقابلے میں اس سال حج کے دوران میں قواعد وضوابط کی خلاف ورزیوں کی تعداد میں کمی ایک بہت بڑی کامیابی ہے اور مجموعی خلاف ورزیاں عازمین حج کی تعداد کا نصف رہی ہیں‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں