.

فوجی مشیر شام ہی میں رہیں گے: ایران

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے دمشق میں متعیّن فوجی اتاشی نے کہا ہے کہ ان کے ملک کے فوجی مشیر اسی ہفتے طے شدہ ایک سمجھوتے کے تحت شام ہی میں موجود رہیں گے۔

ایران کی خبررساں ایجنسیوں تابناک اور فارس کے مطابق بریگیڈئیر جنرل ابو القاسم علی نجاد نے کہا ہے کہ ’’ شام میں ایران کے مشیروں کی مسلسل موجودگی کا معاملہ تہران اور دمشق کے درمیان طے شدہ دفاعی اور ٹیکنیکل سمجھوتے کا حصہ تھا‘‘۔

ایران اور شام کے درمیان سوموار کو ایک سکیورٹی سمجھوتا طے پانے کی اطلاع دی گئی تھی۔یہ سمجھوتا ایرانی وزیر دفاع امیر حاتمی کے حالیہ دورۂ شام کے موقع پر طے پایا تھا۔

علی نجاد کا کہنا تھا کہ اس سمجھوتے میں شام کی علاقائی سالمیت کی حمایت اور شام کی خود مختاری برقرار رکھنے پر بھی زور دیا گیا تھا۔

امیر حاتمی نے گذشتہ روز بیروت سے نشریات پیش کرنے والے ٹیلی ویژن چینل المیادین سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’’ اس سمجھوتے میں شام کی دفاعی صنعت کی بحالی بھی شامل ہے‘‘۔