.

مصر: پورے خاندان کا پراسرار قتل پولیس کے لیے ’مُعمہ‘ بن گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے شمالی شہر بنھا سے ایک خاندان کے تمام افراد کو گلے میں پھندا ڈال کر قتل کردیا گیا۔ پولیس نے واقعے کی تحقیقات شروع کی ہیں مگر اس حوالے سے تا حال کوئی پیش رفت نہیں ہوسکی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق پولیس کا کہنا ہے کہ بنھا شہرمیں ایک گھر سے تعفن زدہ پانچ افراد کی لاشیں ملی ہیں۔ انہیں بہ ظاہر گلے میں پھندا ڈال کر ہلاک کیا گیا۔ واقعے کی اطلاع ملتے ہی پولیس اور سیکیورٹی فورسز کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی اور تمام لاشوں کو قبضے میں لے لیا گیا ہے۔

القلیوبیہ کے ڈائریکٹر سیکیورٹی میجر جنرل رضا طبلیہ نے بتایا کہ مقامی شہریوں نے اطلاع دی کہ الرملہ کے مقام پر ایک فلیٹ سے بو آ رہی ہے۔ پولیس نے موقع پر پہنچ کر دیکھا تو پانچ افراد کو پھندے کے ساتھ لٹکایا گیا تھا۔

ان کی شناخت38 سالہ محمد امین عبدالرحمان، اس کے چار بچے 15 سالہ یوسف، 12 سالہ عمرو، 8 سالہ سماح اور تین ساہ سماء کےناموں سے کی گئی اہے۔ فلیٹ اندر سے بند تھا اور اس کا دروازہ توڑ کرلاشیں باہر نکالی گئیں۔ لاشوں پر کسی قسم کے تشدد کے نشانات نہیں تھے۔

پولیس نے واقعے کی انکوائری کے لیے کمیٹی تشکیل دے دی ہے تاہم اس حوالے سے تا حال کوئی پیش رف نہیں ہوئی اور نہ ہی کوئی گرفتاری عمل میں لائی گئی ہے۔ بہ ظاہر یہ اجتماعی خود کشی کا واقعہ معلوم ہوتا ہے۔