ٹرمپ کی خاتون مشیر کا جنسی ہراسیت کا نشانہ بننے کا انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی سینئر مشیر کیلیان کونوے نے انکشاف کیا ہے کہ وہ جنسی ہراسیت کا نشانہ بن چکی ہیں لیکن انھوں نے اس فعل کے مرتکب اور مقامِ ارتکاب کے بارے میں کوئی تفصیل ذکر نہیں کی۔

کونوے نے یہ انکشاف اتوار کے روز امریکی چینل "سی این این" پر نشر ہونے والے پروگرام 'اسٹیٹ آف دا یونین' کے میزبان جیک ٹوپر کو دیے گئے انٹرویو میں اُس وقت کیا جب وہ ٹرمپ کے نامزد امیدوار بیرسٹر بریٹ کیوانو کے سپریم کورٹ میں تقرّر کا دفاع کر رہی تھیں۔

خاتون مشیر نے مزید کہا کہ "میں جنسی حملے، جنسی ہراسیت اور عصمت دری کا نشانہ بننے والوں کے حوالے سے انتہائی ہمدردی محسوس کرتی ہوں"۔ انہوں نے مزید کہا کہ "میں جنسی حملے اور ہراسیت کا شکار بن چکی ہوں۔ بیرسٹر کیوانوو یا کوئی بھی اور شخص اس کا ذمّے دار نہیں۔ آپ کے نجی برتاؤ کا ذمّے دار آپ کو خود ہونا چاہیے"۔

ایک موقع پر میزبان نے اس امر کو قابل ذکر قرار دیا کہ ٹرمپ کے خلاف جنسی ہراسیت اور نازیبا سلوک کے حوالے سے کئی دعوے سامنے آنے کے باوجود کونوے نے امریکی صدر کے ساتھ کام کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ تاہم کونوے نے اپنے موقف کا دفاع کرتے ہوئے میزبان کو جواب دیا کہ "آپ دونوں امور کو خلط ملط نہ کریں۔ آپ دنیا میں ہونے والے ہر واقعے میں ہمیشہ ٹرمپ کو کھینچ کر نہ لایا کریں"۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جمعہ کو ایف بی آئی کو حکم دیا کہ وہ جنسی بے راوہ روی کے ارتکاب کے ملزم بیرسٹر کیوانوو کے حوالے سے مزید تحقیقات کرے۔ اس حکم کے نتیجے میں سپریم کورٹ میں کیوانوو کے تقرر کی منظوری کے حوالے سے امریکی سینیٹ میں ہونے والی رائے شماری بھی ملتوی ہو جائے گی۔

اس سے قبل سینیٹ کی انصاف کمیٹی نے سپریم کورٹ میں کیوانوو کی نامزدگی کی توثیق کر دی تھی۔ کیوانو پر کچھ روز قبل ایک خاتون پروفیسر نے الزام لگایا تھا کہ انھوں نے انھیں 36 برس قبل جنسی ہراسیت کا نشانہ بنایا تھا جب وہ دونوں ہائی اسکول میں ساتھ پڑھتے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں