.

فرانسیسی صدر نے بالآخر وزیر داخلہ کا استعفی قبول کر لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس میں صدارتی دفتر نے بدھ کی صبح ایک اعلان میں بتایا ہے کہ صدر امانوئل ماکروں نے وزیر داخلہ جیرار کولمب کا استعفا قبول کر لیا ہے۔ کولمب کا استعفا مسلسل دوسرے روز پیش کیے جانے کے بعد قبول کیا گیا اور اس طرح قصرِ الیزیہ کے سربراہ کو ایک مضبوط حلیف کو کھو دینے کی صورت میں شدید دھچکا پہنچا ہے۔

صدارتی دفتر کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ "ماکروں نے جیرار کولمب کا استعفا قبول کر لیا ہے اور وزیراعظم سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ جیرار کے جاں نشین کے تقرر تک وزارت داخلہ کا قلم دان سنبھالیں"۔

جیرار جو وزیراعظم ایڈور فلپ کے بعد فرانسیسی حکومت کے دوسرے اہم ترین ذمّے دار تھے، انہوں نے منگل کو مسلسل دوسرے روز اپنا استعفی صدر ماکروں کو پیش کیا۔ اس سے قبل پیر کے روز بھی جیرار نے استعفا پیش کیا تھا تاہم ماکروں نے اُسے قبول کرنے سے انکار کر دیا تھا۔

جیرار کے استعفے نے فرانسیسی حکومت کے حلقوں میں بوکھلاہٹ پیدا کر دی ہے۔ اس پیش رفت کے بعد فرانسیسی وزیر اعظم نے جمعرات اور جمعے کے روز مقرّرہ اپنے جنوبی افریقہ کے دورے کو منسوخ کر دیا ہے۔

یاد رہے کہ وزیر داخلہ جیرار نے 18 ستمبر کو وزارت داخلہ کے منصب سے استعفا دینے اور 2020ء میں لیون بلدیہ کے میئر کے انتخابات میں حصہ لینے کا اعلان کیا تھا۔ اس کے بعد سے بعض حلقوں کی طرف سے انہیں فورا مستعفی ہونے پر زور دیا جا رہا تھا۔

جیرار کولمب مئی 2017ء میں وزیر داخلہ کا منصب سنبھالنے سے قبل 16 برس تک لیون شہر کے میئر کے عہدے پر براجمان رہے۔