.

مراکش: نابینا نوجوان سرکاری عمارت سے گر کر جاں بحق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مراکش کے دارالحکومت رباط میں 25 ایک پچیس سالہ نابینا نوجوان سرکاری وزارت کی چھت سے گر کر اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا۔

سماجیات میں ماسٹرز کی ڈگری رکھنے والا یہ نوجوان گزشتہ ماہ کے اواخر سے اعلی تعلیم یافتہ نابینا افراد کے ایک گروپ کے ساتھ سماجی بہبود کی عمارت کی چھت پر دھرنا دے رہا تھا۔ مذکورہ افراد کا مطالبہ تھا کہ انہیں عمومی اسامیوں پر براہ راست ملازمتیں دی جائیں۔ اتوار کے روز نماز عشاء کے بعد ایک نابینا نوجوان موبائل پر بات کرتے ہوئے عمارت کی چھت پر ٹہل رہا تھا کہ اچانک وہاں سے نیچے آ گرا اور موقع پر ہی دم توڑ گیا۔

اس واقعے نے سوشل میڈیا اور انسانی حقوق کی تنظیموں کے حلقون میں شدید غم و غصّے کی لہر دوڑا دی ہے۔ اس حوالے سے سماجی بہبود کی وزارت کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے کہ اُس نے اپنی عمارت کی چھت پر دھرنا دینے والے افراد کے مطالبات پر "لا پروائی" کا مظاہرہ کیا۔ عوامی حلقوں کی جانب سے حادثے کی تحقیقات کروانے اور ذمّے دار عناصر کے تعین کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔

ادھر نابینا نوجوان کی موت کے بعد سماجی بہبود کی وزارت نے اعلان کیا ہے کہ جنرل پراسیکیوشن کی نگرانی میں متعلقہ حکام کے ساتھ مل کر واقعے کی تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ وزارت کی جانب سے پیر کے روز جاری ایک بیان میں واضح کیا گیا ہے کہ دھرنا دینے والوں سے کئی بار مطالبہ کیا گیا کہ وہ بات چیت کی میز پر آئیں اور ان کی سلامتی کے پیش نظر چھت سے نیچے اتر آنے پر زور دیا گیا تاہم انہوں نے اندر سے دروازے بند کر لیے تھے جس کے سبب متعلقہ حکام کے کام میں پیچیدگی پیدا ہوئی۔