شاہ عبداللہ کے قتل کی سازش جلد عدالت میں پیش کی جائے گی: سعودی شاہی مشیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے شاہی دیوان کے مشیر سعود القحطانی کا کہنا ہے کہ قطری میڈیا نے سابق سعودی فرماں روا شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز کے قتل کی سازش سے متعلق اُن کے بیان میں تحریف کی کوشش کی۔ القحطانی نے امید ظاہر کی کہ سازش کے حوالے سے حقائق جلد ہی عدالت میں پیش ہوں گے۔

سعودی مشیر نے اپنی ٹوئیٹ میں لکھا کہ "عزمی کا گروپ میری اُس گفتگو کو توڑ موڑ کر پیش کرنے کوشش کر رہا ہے جس میں میں نے شاہ عبداللہ رحمہ اللہ کے قتل کی سازش کے حوالے سے قطر کی دو حمد نامی شخصیات (سابق امیر قطر حمد بن خلیفہ اور سابق وزیر اعظم حمد بن جاسم) کی محمد المسعری اور سعد الفقیہ کے ساتھ رابطہ کاری کے بارے میں بات کی تھی"۔

القحطانی کے مطابق حقائق بالکل واضح اور ٹھوس ہیں اور ان کی اُس بھیانک کوشش کو جھٹلایا نہیں جا سکتا جس کو شاہ عبداللہ نے اُس وقت بڑے دل کے ساتھ معاف کر دیا تھا۔

سابق امیر قطر حمد بن خلیفہ اور ان کے سابق وزیراعظم حمد بن جاسم کی لیبیا کے سابق سربراہ معمر قذافی کے ساتھ بات چیت کی دو صوتی ریکارڈنگز اِفشا ہو کر مںظر عام پر آئی تھیں۔ سال 2014ء میں سامنے آنے والی یہ صوتی ریکارڈنگز 2003ء میں ہونے والی گفتگو پر مشتمل تھیں۔ ان میں قطر کی دونوں مذکورہ شخصیات نے سعودی عرب اور وہاں کے حکمراں خاندان کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔

ایک ریکارڈنگ میں حمد بن جاسم نے کہا کہ آج سے 12 برس بعد سعودی عرب حالیہ شکل میں موجود نہیں ہو گا بلکہ مملکت چھوٹی ریاستوں میں تقسیم ہو چکی ہو گی۔ اس دوران سابق امیر قطر نے یہ اعتراف کیا کہ اُن کا ملک سعودی عرب کے لیے سب سے زیادہ پریشانی کا باعث بننے والے ممالک میں سے ہے۔

انہوں نے باور کرایا کہ سعودی حکمراں نظام اپنی موجودہ حالت پر باقی نہیں رہے گا اور یہ یقینا ختم ہو جائے گا۔ امیر قطر کا مزید کہنا تھا کہ جب امریکیوں کو عراق میں کامیابی مل جائے گی تو ان کا اگلا قدم سعودی عرب ہو گا۔

سابق امیر قطر حمد بن خلیفہ نے مصر اور اردن کو عزت نفس سے محروم ممالک قرار دیا کیوں کہ یہ دونوں سعودی عرب کے ساتھ رابطہ کاری میں ہیں۔ امیر قطر نے سعودی عرب پر نکتہ چینی کرنے والے کئی ٹی وی چینلوں کے لیے اپنی سپورٹ کا انکشاف کیا۔ علاوہ ازیں انہوں نے سعودی اپوزیشن رہ نما سعد الفقیہ کے لیے بھی اپنی حمایت ظاہر کی جو الاخوان المسلمین کے حامی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں