مفت پروازیں قبول کرنے پر نکی ہیلی کے خلاف تحقیقات کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا میں ضابطہ اخلاق کے ایک واچ ڈاگ گروپ نے وزارت خارجہ سے مطالبہ کیا ہے کہ اقوام متحدہ میں امریکی خاتون مندوب نکی ہیلی کے اُن سات نجی پروازوں کے سفر کی تحقیقات کی جائیں جن کی ادائیگی ساؤتھ کیرولائنا کی تین کاروباری شخصیات نے کی تھیں۔

سال 2017ء میں ہونے والے یہ سفر ہیلی نے اپنی حالیہ سال کے مالیاتی گوشواروں کی رپورٹ میں شامل کیے ہیں۔ معلومات سے اس امر کی تصدیق ہوتی ہے کہ وہ مذکورہ کاروباری شخصیات کے ساتھ اپنے ذاتی تعلق کی وجہ سے ادائیگی سے مستثنی قرار دی گئیں۔

امریکی گروپ Citizens for Responsibility and Ethics in Washington کے مطابق ہیلی کی ان پروزاوں کے اخراجات 24 ہزار ڈالر کے قریب بنتے ہیں۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے منگل کے روز اقوام متحدہ میں واشنگٹن کی مندوب نکی ہیلی کا استعفا منظور کر لیا تھا۔

ٹرمپ کے مطابق ہیلی کا استعفا رواں سال کے اختتام پر نافذ العمل ہو جائے گا۔ وہائٹ ہاؤس میں مستعفی خاتون مندوب کے ساتھ کھڑے ہو کر دیے گئے اپنے بیان میں امریکی صدر نے کہا کہ "نکی ہیلی نے شان دار طریقے سے اپنی ذمّے داریاں انجام دیں"۔

ٹرمپ کے مطابق ہیلی نے انہیں تقریبا چھ ماہ قبل آگاہ کر دیا تھا کہ وہ آرام کرنا چاہتی ہیں۔

ٹرمپ نے کہا کہ ہیلی کے جاں نشیں کا اعلان دو سے تین ہفتوں کے اندر کر دیا جائے گا۔

ادھر نکی ہیلی کا کہنا ہے کہ وہ 2020ء کے صدارتی انتخابات میں بطور امیدوار نامزدگی کا ارادہ نہیں رکھتی ہیں۔ یہ وضاحت ان افواہوں کے بعد سامنے آئی ہے جن میں کہا گیا کہ ہیلی اپنے دل میں صدارتی منصب کی خواہش رکھتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں