.

امریکا اس وقت ایران میں حکمراں نظام کی تبدیلی کے لیے کوشاں ہے : روحانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی صدر حسن روحانی کا کہنا ہے کہ امریکا اس وقت ایران میں حکمراں نظام کو تبدیل کرنے کی کوششیں کر رہا ہے۔

اتوار کے روز تہران یونی ورسٹی میں نئے تعلیمی سال کے آغاز پر اپنے خطاب کے دوران روحانی کا کہنا تھا کہ امریکا نفسیاتی اور اقتصادی جنگ کا استعمال کر رہا ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران کی قانونی حیثیت کو مشکوک بنانے کے لیے کوشاں ہے تا کہ ایران میں حکمراں نظام میں تبدیلی لا سکے۔

ایرانی صدر کے مطابق حکمراں نظام کی آئینی حیثیت کو گھٹانا یہ امریکا کا حتمی مقصد ہے۔

رواں برس مئی میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے ایران کے جوہری معاہدے سے علاحدگی کے فیصلے کے بعد ایران اور امریکا کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہو گیا۔ عالمی قوتوں کے ساتھ طے پانے والے مذکورہ جوہری معاہدے سے علاحدگی کے بعد امریکا نے اگست میں ایران پر دوبارہ سے اقتصادی پابندیاں عائد کر دیں۔

امریکا نومبر میں مزید پابندیاں عائد کرنے کا ارادہ رکھتا ہے جن کا ہدف ایران کا آئل سیکٹر ہو گا۔