.

پادری کا استقبال، ترکی کے ساتھ تعلقات کے نئے دور کا آغاز ہو گا: ٹرمپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

رہائی کے بعد، ترکی میں دو سال قید رہنے والے امریکی پادری ہفتے کی شام اوول آفس میں امریکی صدر سے ملے اور ڈونلڈ ٹرمپ کے لیے دعا کی۔

ایوینجلیکل عقیدے کے مسیحی، اینڈریو برنسن نے اپنی رہائی کے حصول کے لیے امریکی حکومت کی جانب سے ترکی پر ٹھوس دبائو ڈالنے پر اظہار تشکر کیا۔

اپنے اہل خانہ کے ہمراہ، برنسن نے کہا کہ ''ہم انتظامیہ کا خصوصی شکریہ ادا کرنا چاہتے ہیں۔ آپ نے ہمارے لیے کوشش کی''۔

اس موقع پر ٹرمپ نے کہا کہ ''چوبیس گھنٹے کے اندر ترک قید خانے سے وائٹ ہائوس پہنچنا معمولی بات نہیں۔ یہ بہت بڑا اقدام ہے اور اس کے نتیجے میں ترکی کے ساتھ تعلقات کا نیا دور شروع ہوگا''۔

انہوں نے پادری کی رہائی کے حوالےسے ترکی کے ساتھ کسی قسم کی ڈیل کی تردید کی اور کہا کہ برنسن کو رہائی دلانے کے لیے کوئی تاوان ادا نہیں کیا گیا، برنسن کی رہائی پر ٹرمپ نے ترک صدر رجب طیب اردوان کا شکریہ بھی ادا کیا۔

برنسن کی رہائی سے امریکا اور ترکی کے درمیان جاری تلخ سفارتی تنازع ختم ہوا۔ اگر برنسن کو دہشت گردی اور جاسوسی کے الزامات کے تحت سزا ہوتی تو اُنھیں 35 برس قید ہو سکتی تھی، جن الزامات کو امریکا بے بنیاد قرار دیتا رہا۔

اوول آفس میں، ٹرمپ نے کہا کہ اس معاملے کا حل امریکا ترک تعلقات کے لیے ''بہت اچھا قدم ہے''۔

ہفتے کے روز ٹرمپ کے نام اپنے ٹوئیٹ میں، اردوان نے کہا کہ ترک عدالت نے آزادانہ فیصلہ کیا؛ اور اس توقع کا اظہار کیا کہ امریکہ کے ساتھ تعاون جاری رہے گا۔