.

الجزائر : القاعدہ کو معلومات فراہم کرنے کے الزام میں 17 مشتبہ افراد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

الجزائر کےعلاقے تیسمسیلت میں حکام نے القاعدہ کے دہشت گردی کے سیل کو پولیس ، نیم فوجی دستوں جینڈر میری اور فوج کے بارے میں معلومات فراہم کرنے کے الزام میں سترہ افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔

الجزائری روزنامے البلاد نے سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ ان افراد کی گرفتاری کئی ہفتوں کی تحقیقات کے بعد عمل میں آئی ہے۔حکام کو علاقے کے مکینوں سے ان افراد کی مشتبہ حرکات کے بارے میں معلوم ہوا تھا اور یہ پتا چلا تھا کہ یہ مشتبہ افراد بعض تائب ہونے والے دہشت گردوں کے گھروں میں آتے جاتے رہے ہیں۔

ذرائع کے مطابق پہلے دو افراد کو گرفتار کیا گیا تھا اور پھر ان سے تفتیش کی روشنی میں باقی افراد کی گرفتاری عمل میں آئی ہے۔اب ان سے اس سیل کے مزید ارکان اور ان کے دہشت گردی کے منصوبوں کے بارے میں جاننے کے لیے تفتیش کی جارہی ہے۔

فوجی کارروائیاں

دریں اثناء الجزائر کی مسلح افواج نے ملک کے شمال اور سرحدی علاقوں میں دہشت گرد گروپوں اور اسمگلروں کے خلاف بڑے پیمانے پر فوجی کارروائی شروع کی ہے ۔سکیورٹی فورسز نے دوسرے ، چوتھے اور چھٹے فوجی علاقوں میں اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے کارروائیاں کی ہیں اور دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو تباہ کردیا ہے۔

الجزائر کی فضائیہ کے لڑاکا طیاروں نے مشرقی اور سرحدی علاقوں اور گذرگاہوں پر پروازیں شروع کررکھی ہیں اور مشرقی سرحد پر سکیورٹی فورسز کے اضافی دستے روانہ کردیے گئے ہیں۔

حال ہی میں یہ اطلاعات سامنے آئی تھیں کہ الجزائر کے اعلیٰ فوجی حکام مشرقی سرحدوں کی نگرانی کررہے ہیں اور ایک نئے سکیورٹی پلان پر عمل پیرا ہیں جس کا مقصد تیونس اور لیبیا کے مسلح گروپوں کی الجزائر میں دراندازی اور فضائی حدود کی خلاف ورزیوں کو روکنا ہے۔