سعودی عرب: مالی سال کی تیسری سہ ماہی میں غیر تیل آمدن میں 48 فی صد اضافہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کی رواں مالی سال کی تیسری سہ ماہی میں غیر تیل آمدن میں گذشتہ مالی سال کے اسی دورانیے کے مقابلے میں 48 فی صد اضافہ ہوا ہے۔اس آمدن کا حجم 211 ارب ریال (56.25ارب ڈالرز) رہا ہے۔

یہ بات سعودی عرب کے وزیر خزانہ محمد الجدعان نے دارالحکومت الریاض میں منعقدہ مستقبل سرمایہ کاری اقدام فورم میں گفتگو کرتے ہوئے کہی ہے۔انھوں نے شرکاء کو بتایا ہے کہ تیسری سہ ماہی میں ملکی اخراجات میں 25 فی صد اضافہ ہوا ہے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب تیل کی معیشت پر انحصار کم کرنے کے لیے مختلف النوع اقتصادی اصلاحات پر مبنی ویژن 2030ء پر عمل پیرا ہے۔موجودہ مالی سال کی دوسری سہ ماہی میں اس کی غیر تیل آمدن 89.40 ارب ریال تھی اور گذشتہ مالی سال کے اسی عرصے کے مقابلے میں اس میں 42 فی صد اضافہ ہوا تھا۔

سعودی عرب کو توقع ہے کہ اس کے آیندہ مالی سال کے بجٹ کا خسارہ 128 ارب ریال رہے گا۔سال 2018ء کے بجٹ میں خسارے کا تخمینہ 195 ارب ریال لگایا گیا تھا۔

محمد الجدعان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب آنے والے وقت میں بجٹ میں بتدریج توازن لانا چاہتا ہے اور اقتصادی صورت حال کے مطابق اضافی یا فالتو اخراجات یا خسارے پر قابو پائے گا۔

انھوں نے کانفرنس کے شرکاء کو بتایا کہ ’’اگر خسارے کو کنٹرول کیا جائے تو پھر یہ ٹھیک ہے۔اگر ہم اچھے دور سے گزر رہے ہوں تو پھر فالتو اخراجات بھی ٹھیک ہوتے ہیں ۔بالخصوص اس وقت جب ملک کا انحصار ایک ایسی چیز پر ہو جس میں اتار چڑھاؤ کا امکان رہتا ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں