سعودی پراجیکٹ کے تحت یمن میں حوثیوں کی بچھائی 11785 بارودی سرنگیں تلف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے شاہ سلمان انسانی امداد اور ریلیف مرکز کے بارودی سرنگیں تلف کرنے کے منصوبے (ماسام) کے تحت یمن میں حوثی شیعہ باغیوں کی بچھائی گئی 11785 بارودی سرنگوں کو اب تک تلف کردیا گیا ہے۔

ماسام منصوبے پر کام کرنے والے ماہرین اور انجنیئروں نے اکتوبر میں تین ہفتے کے دوران میں یمن کے مختلف علاقوں میں بکتر بند گاڑیوں کو اڑانے کے لیے بچھائی گئی 77 بارودی سرنگیں ، عام گاڑیوں پر حملوں کے لیے نصب کردہ 3116 بارودی سرنگیں ، 1817 دھماکا خیز ڈیوائسز اور توپوں یا ٹینکوں کے 146 گولے ناکارہ بنائے ہیں۔ یہ داغے جانے کے بعد پھٹ نہیں سکے تھے ۔اس طرح کل 5156 بارودی سرنگوں کو تلف کیا گیا ہے۔

حوثی جنگجو عام طور پر اسکولوں اور گھروں کے نزدیک بارودی سرنگیں بچھاتے ہیں ۔ان کی مختلف شکلیں اور رنگ ہوتے ہیں اور بالعموم کھلونا شکل کی بارودی سرنگیں بچھائی جاتی ہیں جس سے زیادہ تر بچے، خواتین اور ضعیف العمر افراد نشانہ بنتے ہیں۔وہ ان کے دھماکوں میں موت کا شکار ہوجاتے ہیں یا پھر بازو اور ٹانگیں کٹ جانے کے بعد ہمیشہ کے لیے اپاہج ہوجاتے ہیں۔

یمنی فوج کا کہنا ہے کہ حوثیوں نے ان میں سے زیادہ تر بارودی سرنگوں اور بموں کودیہات میں واقع فارموں ، شہری آبادیوں اور عوامی شاہراہوں کے قُرب وجوار میں چھپا رکھا تھا۔واضح رہے کہ دوسری عالمی جنگ کے بعد یمن میں حوثی شیعہ باغیوں نے سب سے زیادہ بارودی سرنگیں بچھائی ہیں ۔

ایران کے حمایت یافتہ حوثیوں نے نہ صرف ان بارودی سرنگوں کو ایک جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کیا ہے جن پر بین الاقوامی سطح پر پابندی عاید ہے بلکہ انھوں نے ان کو کھلی جگہوں اور شہری آبادیوں کے نزدیک بھی بلا تمیز نصب کیا ہے۔ مزید برآں وہ اپنے زیر قبضہ علاقوں کو خالی کرنے سے قبل وہاں بارودی سرنگیں بچھا جاتے ہیں ۔ان کے دھماکوں میں اب تک تین ہزار سے زیادہ یمنی شہری مارے جاچکے ہیں ۔ان مہلوکین میں ایک بڑی تعداد خواتین اور بچوں کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں