.

ترکی الفیصل کے نزدیک سعودی عرب پر تنقید کرنے والوں کو کیوں شرم آنی چاہیے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کنگ فیصل سینٹر فار ریسرچ اینڈ اسلامک اسٹدیزکی مجلس عاملہ کے سربراہ شہزادہ ترکی الفیصل کا کہنا ہے کہ جن ممالک نے غلط معلومات کی بنا پر شروع کی جانے والی جنگوں میں لاکھوں لوگوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا ،،، اُنہیں دوسروں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے شرم آنی چاہیے۔

ترکی الفیصل نے The National Council on U.S.-Arab Relations کے سامنے خطاب کے دوران کہا کہ "بہت سے ناقدین نے ہم پر بہت زیادہ نکتہ چینی کی ہے۔ ہمارا ایک مقولہ ہے جس کو ہم بہت اہمیت دیتے ہیں۔ وہ یہ کہ 'جس کا اپنا گھر شیشے کا ہو وہ لوگوں پر پتھر نہیں پھینکتا'۔ جن ملکوں نے محض غلط معلومات کی بنیاد پر برپا کی جانے والی جنگوں میں بے قصور لوگوں کو جیل میں ڈال دیا اور انہیں تشدد کا نشانہ بنایا اور لاکھوں لوگوں کو موت کی نیند سُلا دیا ،،، ایسے ممالک کو دوسروں پر تنقید کرتے ہوئے شرم ضرور آنی چاہیے۔ جن ممالک نے صحافیوں اور عام لوگوں کے گرد گھیرا تنگ کیا اور انہیں روپوش کروا دیا ایسے ممالک کو زیب نہیں دیتا کہ وہ خود کو آزادی اظہار کے حامیوں کے طور پر پیش کریں"۔

علاوزہ ازیں شہزادہ ترکی نے زور دے کر کہا کہ" سعودی عرب دنیا بھر میں امن اور ترقی کو یقینی بنانے کے واسطے تزویراتی کردار ادا کر رہا ہے۔ مشرق وسطی میں تنازعات کے خاتمے کے لیے امریکا اور دیگر حلیفوں کے ساتھ مل کر کام کیا جا رہا ہے۔ غریب اور ترقی پذیر ممالک میں ہر فرد کو ملنے والی امداد میں 4% سے زیادہ سعودی عرب پیش کر رہا ہے۔ صرف کل ہی کے روز مملکت نے غریب ممالک کے چھ ارب ڈالر مالیت کے قرضے معاف کر دیے۔ ہم اپنے دوستوں کی مدد کرتے ہیں اور کسی پر بوجھ نہیں"۔