.

لیبیا: صبراتہ میں مسلح تصادم کے بعد شہر میں رات کا کرفیو نافذ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کے مغربی شہر صبراطہ میں ایک مسلح گروپ اور حکومتی فورسز کے درمیان لڑائی کے بعد شہر میں رات کا کرفیو لگا دیا گیا ہے۔
خبر رساں اداروں کے مطابق عالمی سطح پر لیبیا کی تسلیم شدہ حکومت کی طرف سے "فیس بک" پر پوسٹ کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ شہرمیں امن وامان کےقیام کے لیے رات کا کرفیو نافذ کیا گیا ہے۔بیان میں کہا گیا ہے کہ کرفیو مقامی وقت کے مطابق رات نو بجےسے صبح چار بجے تک رہے گا۔
مقامی ذرائع کےمطابق صبراتہ میں رات کا کرفیو اس وقت لگایا گیا جب دو سال قبل شہر سے بے دخل کیے گئے ایک مسلح گروپ نے دوبارہ حملے شروع کردیے تھے۔ یہ گروپ عالمی اشتہاری جنگجو احمد الدباشی کی قیادت میں سرگرم ہے۔
درایں اثناء اقوام متحدہ کے لیبیا میں قائم ہائی کمیشن نے صبراتہ شہر پر الدباشی گروپ کے حملے کی شدید مذمت کی ہے۔ یو این ہائی کمیشن کے بیان میں کہا گیا ہے کہ شہری املاک پرحملہ اور شہریوں کی جانوں کو خطرے میں ڈالنا عالمی انسانی قوانین کے تحت سنگین جرم ہے۔
گذشتہ روز صبراتہ کی سٹی کونسل کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ ایک مسلح گروپ کی کارروائی کے بعد پولیس نے شہر کا کنٹرول دوبارہ سنبھال لیا ہے۔ بیان میں کا گیا ہے کہ شہر کا امن تاراج کرنے والے عناصر کےخلاف سخت کارروائی کی جا رہی ہے۔