.

بریگزٹ پر ووٹنگ ملتوی : برطانوی پاؤنڈ کی قدر میں کمی ہو گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانوی وزیرِ اعظم تھریسا مے نے یورپین یونین سے علاحدہ ہونے کے معاہدے [بریگزٹ] پر پارلیمنٹ میں یقینی شکست کو دیکھتے ہوئے ووٹنگ کرانے سے روک لیا ہے جس کے بعد برطانوی پاؤنڈ کی قیمت بہت زیادہ گر گئی ہے۔

منگل کو برطانیہ اور یورپین یونین کے درمیان بریگزیٹ معاہدے کی برطانوی پارلیمنٹ سے توثیق کرنے کے لیے ووٹنگ ہونا تھی۔ لیکن وزیرِ اعظم نے تاحال ووٹنگ کے لیے کسی نئی تاریخ کا اعلان نہیں کیا ہے۔

اس طرح تھریسا مے کے اس اعلان کے بعد برطانیہ میں بے یقینی کی حالت میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔ خیال کیا جا رہا تھا کہ بریگزٹ کے معاہدے پر رائے شماری کے بعد بے یقینی کم ہوجائے گی۔

تاہم ووٹنگ کے ملتوی کیے جانے سے بریگزٹ معاہدے کی شکست سے تو بچ گئی ہیں لیکن یہ التوا برطانوی پاؤنڈ کی قیمت کو گرنے سے نہ روک سکا۔اس وقت پاؤنڈ کی قدر ایک ڈالر اور چھبیس سینٹس قیمت گرچکی ہے جو گذشتہ اٹھارہ ماہ میں سب سے کم قیمت ہے۔

ادھر ہرمیس انویسٹمینٹ مینیجمینٹ کے سلویا ڈال اینجیلو نے کہا ہے کہ بزنس کمیونٹی کا اعتماد نچلی ترین سطح تک گرگیا ہے۔برطانوی چیمبر آف کامرس کے رہنما، ڈاکٹر ایڈم مارشل نے برے حالات کا انتباہ کیا ہے۔

’حالات کو قابو میں لانے کے لیے کوششوں کو دوگنا کردینا چاہیے اور ساتھ ہی برطانوی کاروباری حلقوں کو کسی بھی قسم کے حالات سے نمٹنے سے تیار کرنے کے لیے اقدامات بڑھا دینے چاہیے۔ ‘

یورپی یونین سے علاحدہ ہونے کے لیے بریگزٹ معاہدے پر کسی قسم کا واضح فیصلہ نہ کیے جانے کی وجہ سے اس وقت برطانیہ جدید تاریخ کے بدترین بحران کی طرف بڑھ رہا ہے۔