.

مسافر میاں بیوی کو فضائی کمپنی کو 3700 ڈالر جرمانہ کیوں دینا پڑا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ کی ایک صارف عدالت نے ایک سال قبل ہوائی جہاز پر سفر کے دوران آپس میں‌الجھنے والےمیاں بیوی کو حکم دیا ہے کہ وہ فضائی کمپنی کو 3700 ڈالرجرمانہ ادا کریں کیونکہ ان کی لڑائی کی وجہ سے ہوائی جہاز کو ہنگامی لینڈنگ کرنا پڑی تھی فضائی کمپنی کو اس کے نتیجے میں نقصان پہنچا تھا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق 55 سالہ رونلڈ فیل او ان کی 65 سالہ اہلیہ بولن گورڈون برطانوی فضائی کمپنی "جیٹ 2" کی ایک پرواز سے چھ جولائی 2017ء کو لندن کے"اسٹانسٹیڈ" ہوائی اڈے سے اسپین کے جزرالکناری کے لیے روانہ ہوئے۔ جہاز جب کافی بلندی پر پہنچا تو ان دونوں کے درمیان کسی بات پر تلخی پیدا ہوئی جو مسلسل بڑھتی گئی۔ دوسرے مسافروں اور طیارے کے عملے نے بھی مداخلت کی کوشش کی مگرمعاملہ ٹھنڈا نہ ہوا۔ بالآخر پائلٹ کو طیارہ قریب میں واقع پرتگال کے "فارو" ہوائی اڈے پر اتارنا پڑا۔

طیارے کے پائلٹ کا کہناہے کہ میاں بیوی کی باہمی لڑائی اور ان کا دوسرے مسافروں سے نا مناسب رویہ طیارے کی ہنگامی لینڈنگ کا باعث بنا۔ اگر وہ طیارے کو پرتگال نہ اتارتے تو اس کےبعد انہیں سمندرکے اوپر سے طویل سفر کرنا تھا۔ معاملہ مزید خراب ہونے پرہنگامی لینڈنگ ممکن نہ تھی۔

"جیٹ 2" نے طیارے کی ہنگامی لینڈنگ کا سبب بننے والے میاں بیوی کو 3 ہزار پائونڈ جرمانہ کرنے کے ساتھ ساتھ ان کے تا حیات کمپنی کے طیاروں میں سفر پربھی پابندی عاید کی ہے۔