تھریسا مے کو'کند ذہن' عورت قرار دینے پرنیا تنازع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

برطانیہ کے اپوزیشن رہ نما اور لیبر پارٹی کے صدر جیرمی کوربن کو کنزر ویٹیو ارکان کی جانب سے وزیراعظم کے خلاف متنازع الفاظ کے بارے میں تبصرہ کرنے پر سخت تنقید کا سامنا ہے۔

خبر رساں اداروں کے مطابق جیرمی کوربن پرالزام ہے کہ انہوں‌نے ایک تقریب کے دوران وزیراعظم تھریسا کے کو ”بریگزیٹ" کے حوالے سے رائے شماری میں تاخیر پر 'کند ذہن' عورت قرار دیا تھا۔

جیرمی کوربن کو دارالعوام کے ایک اجلاس میں‌کیمروں کے سامنے وزیراعظم تھریسا مے پر تنقید کرتے دیکھا گیا اور کہا کہ وزیراعظم اعتماد کاووٹ حاصل کرنے میں ناکامی کے ڈر سے بریگزیٹ کی رائے شماری میں تاخیر کر رہی ہیں۔ اس موقع پر کنزر ویٹیو ارکان نے جیرمی کوربن کے الفاظ کو 'شرمناک' قرار دیا جب کہ وزیراعظم تھریسا میں نے نسبتا معتدل انداز اختیار کرتے ہوئے کہا کہ آج ایک سو سال کے بعد برطانیہ میں خواتین کو ملک میں ووٹ ڈالنے کا حق ملا ہے تو ہمیں اس ایوان کو خواتین کے حوالے سے نامناسب الفاظ کے استعمال سے گریز کرنا چاہیے۔

دارالحکومت کے چیئرمین جون بیرکو نے کوربن کے ٹرائل کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ جیرمی کوربن سنتے ہیں اور نہ ہی دیکھتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اس طرح کی غلطی کے مرتکب افراد کو معافی مانگنی چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں