.

افغانستان میں رواں سال کا سب سے زیادہ خونی حملہ ، ہلاکتوں کی تعداد 43 ہو گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغانستان میں وزارت صحت نے منگل کے روز بتایا ہے کہ دارالحکومت کابل میں سرکاری کمپلیکس پر حملے میں 43 افراد ہلاک ہو گئے۔ رواں سال افغان دارالحکومت میں ہونے والا یہ خون ریز ترین حملہ تھا جو کئی گھنٹوں تک جاری رہا۔ اس دوران آتشی ہتھیاروں سے شدید فائرنگ کے علاوہ خود کش دھماکے بھی ہوئے۔

افغان وزارت صحت کے ترجمان وحید مجروح کے مطابق پیر کے روز ہونے والے اس حملے میں 10 افراد زخمی بھی ہوئے۔ کارروائی میں سرکاری کمپلیکس کو نشانہ بنایا گیا جہاں پبلک ورکس اور سماجی امور کی وزارت کے دفاتر واقع ہیں۔

مسلح افراد نے کمپلیکس کے داخلی راستے پر کار دھماکا کرنے کے بعد عمارت پر دھاوا بول دیا۔ اس کے نتیجے میں وہاں موجود ملازمین وہاں سے بھاگ نکلے اور بعض نے جان بچانے کے لیے کھڑکیوں سے باہر چھلانگ لگا دی۔

جائے واقعہ پر سکیورٹی فورسز کے پھیل جانے اور حملہ آوروں کے ساتھ جھڑپوں کے ساتھ عمارت کے اندر سیکڑوں افراد یرغمال بن گئے۔

یاد رہے کہ گزشتہ ماہ کابل میں ایک مذہبی اجتماع کے بیچ خود حملے کے نتیجے میں 55 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔


y