.

اٹلی : سسلی کے آتش فشاں پہاڑ ایٹنا کے نزدیک 4.8 کی شدت کا زلزلہ ، متعدد افراد زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اٹلی کے جزیرے سسلی (صقلیہ) میں واقع یورپ کے سب سے متحرک آتش فشاں پہاڑ ایٹنا کے علاقے کے نزدیک بدھ کو 4.8 کی شدت کا زلزلہ آیا ہے جس کے نتیجے میں متعدد افراد زخمی ہوگئے ہیں،عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے اور ایک ہائی وے کو جزوی طور پر بند کردیا گیا ہے۔

اطالوی حکام کے مطابق زلزلے سے منہدم ہو جانے والی ایک عمارت سے دو افراد کو نکالا گیا ہے اور کم سے کم دس افراد کو اسپتال منتقل کیا گیا ہے۔انھیں ملبہ گرنے سے معمولی زخم آئے ہیں۔ایک ضعیف العمر خاتون کی ہڈیاں ٹوٹ گئی ہیں ۔ان کے علاوہ اٹھارہ افراد نے خود سے اسپتال کا رُخ کیا ہے۔ انھیں بھی معمولی زخم آئے تھے یا وہ زلزلے کے نتیجے میں صدمے سے دوچار ہوگئے تھے۔

زلزلے سے متاثرہ علاقہ چھوٹے قصبوں اور فارموں پر مشتمل ہے۔ اس علاقے میں ماؤنٹ ایٹنا سے گذشتہ سوموار کو لاوا پھوٹ پڑا تھا۔اس کے بعد یہ پہلا شدید زلزلہ ہے۔آتش فشاں پہاڑ سے راکھ اڑ رہی ہے اور سسلی کی فضائی حدود کو عارضی طور پر پروازوں کے لیے بند کردیا گیا ہے۔البتہ کاٹانیا شہر کے ایک ہوائی اڈے سے پروازوں کی آمد ورفت جاری ہے۔

اٹلی کے نیشنل انسٹی ٹیوٹ برائے جیو فزکس کے مطابق زلزلہ مقامی وقت کے مطابق بدھ کی صبح 3 بج کر 18 منٹ ( 0218 جی ایم ٹی ) پر آیا تھا اور اس کی گہرائی 1.2 کلومیٹر تھی۔اس کا مرکز سسلی کے صوبائی دارالحکومت کاٹانیا سے شمال میں تھا اور زلزلے کے بعد بہت سے خاندانوں نے رات سڑکوں اور گلیوں پر گزاری تھی۔

واضح رہے کہ ماؤنٹ ایٹنا 3300 میٹر بلند ہے اور اس سے گذشتہ 27 سو سال سے لاوا ابل رہا ہے۔اس سے سوموار سے قبل 2017ء کے اوائل میں لاوا ابل پڑا تھا۔مارچ کے آخر میں ایک مطالعاتی رپورٹ منظرعام پر آئی تھی جس میں یہ بتایا گیا تھا کہ یہ آتش فشاں پہاڑ آہستہ آہستہ مگرمسلسل بحرِ متوسطہ کی جانب ڈھلک رہا ہے اور یہ ہر سال 14 ملی میٹر بحر متوسطہ کی جانب چلا جاتا ہے۔