وزیر خارجہ ابراہیم العساف اور وزیر مملکت عادل الجبیر کے کیا کیا فرائض ہوں گے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

سعودی فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے جمعرات کو ایک فرمان کے ذریعے کابینہ میں رد وبدل کیا ہے اور ماضی میں مختلف وزارتی عہدوں پر فائز رہنے والے ابراہیم العساف کو ملک کا نیا وزیر خارجہ مقرر کیا ہے۔ان کے پیش رو عادل الجبیر کو اب وزیر مملکت برائے امور خارجہ مقرر کیا گیا ہے اور وہ سفارتی امور انجام دیں گے۔

سعودی عرب کے سرکاری ذرائع کے مطابق وزارت خارجہ کی تنظیم ِ نو کی جارہی ہے۔اس کا مقصد ذمے داریوں کو دو وزراء پر تقسیم کرنا ہے اور اس سے ان دونوں وزراء کے کام سے مملکت کو فائدہ پہنچے گا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ نئے انتظام کے تحت ابراہیم العساف کو وزارت ِ خارجہ کے مختلف شعبوں کی تشکیل نو کی ذمے داری سونپی گئی ہے اور عادل الجبیر سفارتی امور انجام دیں گے۔

ابراہیم العساف گذشتہ قریباً 21 سال سے سعودی عرب کے وزیر خارجہ چلے آرہے تھے۔انھوں نے و زیر خزانہ کی حیثیت سے سعودی عرب میں اخراجات میں کمی کے لیے مختلف اقدامات تجویز کیےتھے اور حکومت نے ان کی منظوری دی تھی۔

ابراہیم العساف 1949 میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ شادی شدہ ہیں اور ان کے چار بچے ہیں۔ انھوں نے الریاض میں ابتدائی اور اعلیٰ تعلیم حاصل کی تھی اور 1968ء میں جامعہ شاہ سعود سے اقتصادیات اور سیاسیات میں گریجو ایشن کی ڈگری حاصل کی تھی۔ اس کے بعد انھیں شاہ عبدالعزیز ملٹری کالج میں لیکچرر مقرر کیا گیا تھا۔اس ملازمت کے دوران ہی میں وہ کولوراڈو (امریکا) اعلیٰ تعلیم کے لیے چلے گئے تھے جہاں انھوں نے ڈینور یونیورسٹی سے اقتصادیات میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی تھی ۔انھوں نے ’’اوپیک اور بین الاقوامی تیل مارکیٹ ‘‘ کے عنوان سے مقالہ لکھا تھا۔

انھیں سعودی عرب واپسی پر شاہ عبدالعزیز ملٹری کالج کے شعبہ انتظامی علوم کا سربراہ مقرر کیا گیا تھا۔1986ء میں انھیں عالمی مالیاتی فنڈ ( آئی ایم ایف) سعودی عرب کا قائم مقام ایگزیکٹو ڈائریکٹر مقرر کیا گیا تھا۔1995ء میں انھیں سعودی عرب کی مانیٹری ایجنسی ( ساما) کا ڈپٹی گورنر مقرر کیا گیا تھا۔1996ء میں شاہ فہد بن عبدالعزیز کے دور حکومت میں انھیں پہلی مرتبہ وزیر خزانہ مقرر کیا گیا تھا۔انھوں نے مالیاتی بحرانوں کے دوران میں غیرمعمولی کردار ادا کیا تھا۔اس کے پیش نظر انھیں بعد میں آنے والی سعودی حکومتوں نے وزیر خزانہ کی حیثیت سے برقرار رکھا تھا۔

وزیر مملکت برائے امور خارجہ عادل الجبیر 1962ء میں پیدا ہوئے تھے۔وہ خالص سفارتی پس منظر کے حامل ہیں ۔ان کے والد جرمنی میں سعودی عرب کے ثقافتی اتاشی تھے اور عادل الجبیر کی وہیں پیدائش ہوئی تھی۔وہ وزیر خارجہ کے منصب پر فائز ہونے سےقبل مختلف سفارتی عہدوں پر فائز رہے تھے۔ وہ امریکا میں سعودی سفارت خانے کے ترجمان رہے تھے۔پھر انھیں نیو یارک میں اقوام متحدہ میں سعودی عرب کا مستقل مندوب مقرر کیا گیا تھا۔

سعودی وزیر خارجہ شہزادہ سعود الفیصل کی سبکدوشی کے بعد انھیں وزیر خارجہ مقرر کیا گیا تھا۔شہزادہ سعود الفیصل چار عشرے سے زیادہ عرصے تک سعودی عرب کے وزیر خارجہ رہے تھے اور علالت کے سبب سبکدوشی کے کچھ عرصے کے بعد ہی وہ انتقال کر گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں