بھارتی ریاست کیرالا میں پرتشدد ہنگامے پھوٹ پڑے

’مقدس مندر‘ میں خواتین کی پوجا پر کئی شہروں میں مظاہرے، گرفتاریاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جنوبی بھارت کی ریاست کیرالا میں اس وقت ہنگامہ آرائی اور تشدد کے واقعات رونما ہوئے جب دو خواتین رسم ورواج کی خلاف ورزی اور تمام رکاوٹوں عبور کرتے ہوئے ایک مقدس مندر میں داخل ہو گئیں۔

مقامی ذرائع کے مطابق کناکا درگا اوربندو پولیس کی حفاظت میں سیاہ رنگ کے لباس میں سبری مالا مندر میں داخل ہوئیں اور تیزی سے پوجا کر کے واپس لوٹ گئیں۔ ان میں سے ایک خاتون نے بتایا، ’’ہم اٹھارہ متبرک سیڑھیاں چڑھ کر نہیں بلکہ ہم عملے کے لیے مختص دروازے سے مندر میں داخل ہوئے تھے۔‘‘ دونوں خواتین کی عمریں چالیس برس کے لگ بھگ ہیں۔

جیسے ہی اس واقعے کی ویڈیو منظر عام پر آئی پجاری نے مندر کو بند کرتے ہوئے اسے پاک کرنا شروع کر دیا۔ ’پاگیزگی‘ کا یہ عمل تقریباً ایک گھنٹے تک جاری رہا۔

سبری مالا مندرکو ہندو انتہائی مقدس سمجھتے ہیں۔ اس سے قبل اس مندر میں دس سے پچاس سالہ خواتین کا داخلہ ممنوع تھا۔ سپریم کورٹ نے 28 ستمبر کو حکم دیا تھا کہ اس مندر میں ہر عمر کی خاتون کو جانے کی اجازت ہونی چاہیے۔ اس فیصلے کے بعد خواتین نے کئی مرتبہ مندر میں جانے کی کوشش کی لیکن انتہا پسند ہندو اس حکم پر عملدرآمد کی راہ میں رکاوٹ بنے ہوئے ہیں۔ سپریم کورٹ کے فیصلہ سامنے آنے کے بعد یہ پہلا موقع ہے، جب اس عمر کی خواتین نے اس مندر میں قدم رکھا۔

مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق خواتین کی ویڈیو سامنے آنے کے بعد ریاست کے کئی شہروں میں مظاہرے شروع ہو گئے۔ مظاہرین کو منتشر کرنےکے لیے پولیس نے آنسو گیس اور پانی کی تیز دھار کا استعمال کیا۔ اس دوران متعدد پولیس اہلکاروں کے زخمی ہونے اور متعدد افراد کو گرفتار کیے جانے کی بھی اطلاع ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں