.

یمن : ازبک ڈاکٹر کی اغوا کے چار روز بعد حوثیوں کی جیل میں پُراسرار حالات میں موت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کی جنوبی گورنری اِب میں حوثی ملیشیا کے زیر انتظام ایک جیل میں ایک ازبک آرتھو پیڈک ڈاکٹر کی پُراسرار حالات میں موت واقع ہوگئی ہے۔

یمنی ذرائع کے مطابق 55 سالہ ڈاکٹر عزام کی موت ضلع یارم میں واقع ایک جیل میں ہوئی ہے لیکن ان کی موت کے حقیقی اسباب کے بارے میں کچھ معلوم نہیں ہو سکا ہے۔

ایران نواز حوثی شیعہ باغیوں نے گذشتہ منگل کے روز ڈاکٹر عزام کے گھر پر دھاوا بولا تھا اور انھیں ، ان کے ساتھی ایک تاجک ڈاکٹر اور ایک یمنی شخص کو اغوا کرکے لے گئے تھے۔اس دوسرے ڈاکٹر کا تعلق تاجکستان سے بتایا گیا ہے۔

ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ حوثیوں نے ازبک ڈاکٹر کو دورانِ حراست جسمانی اور نفسیاتی تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔گذشتہ جمعرات کو حوثی ملیشیا کے زیر انتظام میڈیا نے یہ اطلاع دی تھی کہ اس کے جنگجوؤں نے اس ڈاکٹر اور اس کے ساتھیوں کو ایک شراب فیکٹری میں کام کرنے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔

واضح رہے کہ حوثی جنگجو اپنے زیر قبضہ علاقوں میں واقع جیلوں میں زیر حراست افراد کو بدترین انسانی تشدد کا نشانہ بنانے کے لیے مشہور ہیں اور گذشتہ ماہ امریکی خبررساں ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس نے ایک تحقیقاتی رپورٹ جاری کی تھی۔اس میں قیدیوں پر حوثیو ں کے تشدد کے تصاویری شواہد پیش کیے گئے تھے۔