.

حوثیوں کے صنعاء میں گریفنتھس سے مذاکرات، مشرقی الحدیدہ پر گولا باری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایلیٹ بریگیڈ نے اتوار کے روز مشرقی الحدیدہ میں یمنی فوج کے ٹھکانوں پر بلا امتیاز گولا باری کی تصدیق کی ہے جس سے کیلو 7 علاقے میں عالمی خوراک پروگرام کے گوداموں میں آگ بھڑک اٹھی۔

اسی گولہ باری کے تناظر میں دوسری جانب یمن کے لئے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی مارٹن گریفنتھس حوثیوں سے مذاکرات کے لئے یمن پہنچے ہیں جہاں وہ الحدیدہ سے متعلق بحران کے حل معاہدے پر عمل درآمد کے لئے دباو ڈالیں گے۔

اتوار کے روز مسٹر گریفتھس نے حوثی رہنما عبدالملک الحوثی سے ملاقات کی۔ فرانسیسی خبر رساں ادارے نے سرکردہ حوثی ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ یمنی حکومت اور حوثیوں کے درمیان مذاکرات کا دوسرا دور اردن کے دارلحکومت عمان میں منعقد ہو گا جس میں معاہدے کے معاشی پہلووں پر بات کی جائے گی۔

اقوام متحدہ کے ایلچی ہفتے کے روز دارلحکومت صنعاء پہنچے ہیں تاکہ الحدیدہ میں جنگ معاہدے پر عمل درآمد میں تیزی لائی جا سکے اور الحدیدہ میں حوثیوں کی فائر بندی معاہدے کی خلاف ورزی کے بعد اسٹرٹیجک اہمیت کے علاقوں میں سرکاری فوج کی از سر نو تعیناتی کے عمل کو تیز کیا جا سکے جو انسانی امداد پہنچانے میں کلیدی سمجھتے جاتے ہیں۔

یاد رہے گذشتہ برس دسمبر کے وسط میں سویڈن میں ہونے والے یمن امن مذاکرات میں الحدیدہ شہر کو مرکزی حیثیت حاصل رہی ہے۔ یمنی کی لڑائی میں الحدیدہ کئی عرصے سے اہم شہر چلا آ رہا ہے۔

معاہدے کی رو سے ایرانی حمایت یافتہ حوثیوں کو علاقہ، بالخصوص الحدیدہ بندرگاہ خالی کرتے ہوئے اپنے جنگجووں کی معاہدے کی شرائط کے مطابق دوسرے علاقوں میں تعیناتی کرنا ہے۔