متنازع جزیروں سے متعلق بیان پر جاپانی سفیر کی طلبی اور روس کا احتجاج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

روسی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ ماسکو میں جاپانی سفیر کو طلب کر کے جاپانی قیادت کے اُس بیان پر سخت احتجاج کیا گیا ہے جو دونوں ملکوں کے بیچ کئی دہائیوں سے تنازع کا باعث جزیروں کے حوالے سے دیا گیا۔

جاپانی وزیراعظم شینزو ایبے مذکورہ جزیروں کے حوالے سے کسی معاہدے کے طے پا جانے کے واسطے کوشاں ہیں۔ وہ رواں ماہ روسی صدر ولادی میر پوتین کے ساتھ بات چیت بھی کریں گے۔ تاہم ماسکو کی جانب سے ان جزیروں سے دست بردار ہونے کا کوئی عندیہ نہیں دیا جا رہا۔

دونوں ملکوں کے درمیان ان جزیروں کے حوالے سے تقریبا سات دہائیوں سے تنازع جاری ہے۔ سوویت یونین نے دوسری عالمی جنگ کے آخری دونوں میں ان جزیروں پر قبضہ کر لیا تھا۔

روسی وزارت خارجہ کی جانب سے بدھ کو رات گئے جاری ہونے والے بیان میں بتایا گیا ہے کہ اس نے جاپانی سفیر کو طلب کیا تا کہ جاپان کے اس بیان پر احتجاج ریکارڈ کرایا جائے جس میں کہا گیا ہے کہ جزیروں کو جاپان کے کنٹرول میں منتقل کرنے کے لیے جزیروں پر مقیم روسیوں کے ساتھ مفاہمت کی ضرورت ہے۔

وزارت خارجہ کے بیان میں ٹوکیو کے اس تبصرے پر بھی احتجاج کیا گیا جو اس نے جزیروں پر "قبضے" کے بدلے زرتلافی کی ادائیگی پر روسی انکار کے حوالے سے کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں