.

ایران نے ایٹمی توانائی کی عالمی ایجنسی کو ناقص اور جعلی معلومات فراہم کیں : بولٹن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی قومی سلامتی کے مشیر جون بولٹن کا کہنا ہے کہ ایران کا خفیہ جوہری آرکائیو اس بات کے واضح ثبوت فراہم کرتا ہے کہ ایران کی جانب سے ایٹمی توانائی کی عالمی ایجنسی کے سامنے ظاہر کی گئی معلومات دانستہ طور پر "غیر مربوط اور جعلی" تھیں۔

پیر کے روز اپنی ٹویٹ میں بولٹن نے کہا کہ صدر ٹرمپ ایران کے ساتھ اس قبیح جوہری معاہدے کو منسوخ کرنے کے فیصلے میں حق بجانب تھے۔

بولٹن نے زور دے کر کہا کہ ایران پر دباؤ اسے اپنی جوہری خواہشات سے دست بردار ہونے پر زیادہ مجبور کر دے گا۔

بولٹن کی ٹویٹ میں اس معلومات کا لنک بھی شامل کیا گیا جو اسرائیل نے 2018 میں ایران کے خفیہ جوہری سرگرمیوں کے آرکائیو کے حوالے سے پیش کی تھی۔

امریکی اخبار وال اسٹریٹ جنرل نے اتوار کے روز انکشاف کیا تھا کہ بولٹن نے چند ماہ قبل امریکی وزارت دفاع "پینٹاگون" سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ ایران پر حملے کا منصوبہ پیش کرے۔ اخبار کے مطابق بولٹن نے یہ مطالبہ ستمبر 2018 میں عراقی دارالحکومت بغداد میں امریکی سفارت خانے پر مارٹر گولے داغے جانے کے بعد کیا۔ اس کارروائی کے پیچھے عراق میں ایران کی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیاؤں کا ہاتھ تھا۔

بولٹن کا مذکورہ مطالبہ امریکی رجحان کی عکاسی کر رہا ہے جو تہران کے ساتھ مقابلے کی جانب زیادہ میلان رکھتا ہے۔ بولٹن گزشتہ برس اپریل میں اپنی ذمے داری سنبھالنے کے بعد سے اس کا مطالبہ کر رہے ہیں۔