.

سعودی آرامکو روس کے ایل این جی منصوبے کے حصص کی خریداری میں سنجیدہ ہے: خالد الفالح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

روس کے خود مختار دولت فنڈ (آر ڈی آئی ایف )نے کہا ہے کہ وہ سعودی عرب کے ساتھ سرمایہ کاری کے منصوبوں میں نمایاں اضافہ کرنا چاہتا ہے۔

یہ بات آر ڈی آئی ایف کے سربراہ کیریل دمتریف نے کہی ہے۔انھوں نے سعودی دارالحکومت الریاض میں سعودی وزیر توانائی خالد الفالح اور دوسرے اعلیٰ حکام سے ملاقات کی ہے اور ان سے تیل صاف کرنے ، پیٹروکیمیکلز ، گیس کیمیکلز اور آئیل فیلڈ سروسز سمیت توانائی کے مختلف شعبوں میں دوطرفہ تعاون بڑھانے کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا ہے۔

خالد الفالح نے ان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سعودی آرامکو روس کے مائع قدرتی گیس ( ایل این جی) کے منصوبے کے حصص کی خریداری میں سنجیدہ ہے لیکن ابھی اس کی قیمت اور دیگر شرائط پر اتفاق نہیں ہوا ہے۔

روسی فنڈ نے گذشتہ ماہ کہا تھا کہ وہ نوواٹیک کے آرکٹک ایل این جی منصوبے میں سعودی آرامکو کے ساتھ مل کر سرمایہ کاری پر غور کررہا ہے۔

اس حوالے سے ایک اور خبر یہ ہے کہ روس کے وزیر توانائی الیگزینڈر نوواک نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ سوئٹزر لینڈ کے شہر ڈیووس میں آیندہ ہفتے منعقد ہونے والے عالمی اقتصادی فورم کے موقع پر خالد الفالح سے ملاقات کریں گے۔

سالانہ عالمی اقتصادی فورم 23 سے 26 جون تک ڈیووس میں ہورہا ہےاور اس میں دنیا بھر سے ملکوں کے سربراہان ریاست ومملکت کے علاوہ اقتصادی ماہرین ، کاروباری شخصیات اور بڑے مالیاتی اور ٹیکنالوجی اداروں کے اعلیٰ انتظامی افسر شرکت کریں گے۔

سعودی آرامکو کے چیف ایگزیکٹو افسر ( سی ای او ) امین ناصر نے نومبر میں کہا تھا کہ مستقبل میں ان کی کمپنی کی روس کے ساتھ شراکت داری میں اضافہ ہوگا اور وہ دونوں دوطرفہ تعاون کے منصوبوں میں اضافے کے لیے بات چیت کررہے ہیں۔انھوں نے تب ماسکو میں آرامکو کے ایک منصوبے کا افتتاح کیا تھا۔