سوڈان: اپوزیشن لیڈر الصادق المہدی کی بیٹی گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوڈان میں سب سے بڑی اپوزیشن پارٹی حزب الامہ نے بدھ کے روز ایک اعلان میں بتایا ہے کہ حکام نے پارٹی کی نائب سربراہ مریم الصادق المہدی کو حراست میں لے لیا۔

پارٹی کے ٹویٹر اکاؤنٹ پر مختصر ٹویٹ میں حراست میں لیے جانے کی وجوہات کے حوالے سے کوئی تفصیل بیان نہیں کی گئی۔

ادھر "العربیہ" کے نمائندے نے پارٹی قیادت کے دفتر کے ایک رکن کے حوالے سے تصدیق کی ہے کہ بدھ کی صبح گیارہ بجے سکیورٹی اور انٹیلی جنس ادارے کے اہل کار مریم کو اپنے ساتھ لے کر چلے گئے۔

اس سے قبل منگل کی شب سکیورٹی فورسز نے مریم کے گھر پر دھاوا بول کر تلاشی لی جب کہ انہیں آگاہ کر دیا گیا تھا کہ وہ گھر پر موجود نہیں ہے۔

یاد رہے کہ سوڈانی حکام نے منگل کے روز اعلان کیا تھا کہ انہوں نے ایک ماہ سے زیادہ عرصے سے جاری احتجاجی مظاہروں میں گرفتار ہونے والے تمام افراد کو رہا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

دوسری جانب سوڈان میں پرفیشنلز ایسوسی ایشن اور اپوزیشن کے تین سیاسی الائنسوں نے سوڈانی حکومت کے اس فیصلے پر شکوک کا اظہار کیا ہے۔ اس سلسلے میں منگل کی شام جاری ایک مشترکہ بیان میں تمام گرفتار شدگان کی رہائی کے اعلان کو دھوکا اور چال بازی قرار دیا گیا۔ بیان میں باور کرایا گیا کہ سرکاری جیلیں ابھی تک سوڈانی پیشہ ورانہ اہلیت کے حامل افراد، سیاست دانوں اور عام شہریوں سے بھری ہوئی ہیں اور سکیورٹی ادارے اندھادھند گرفتاریاں عمل میں لا رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں