.

پوپ فرانسیس کے اعزاز میں ابو ظبی کے صدارتی محل میں پُروقار استقبالیہ تقریب کا انعقاد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

رومن کیتھولک چرچ کے روحانی پیشوا پوپ فرانسیس کے اعزاز میں ابو ظبی کے صدارتی محل میں باضابطہ استقبالیہ تقریب منعقد کی گئی ہے جہاں ان کا پُرجوش انداز میں خیر مقدم کیا گیا ۔وہ اتوار کو تین روزہ دورے پر ابو ظبی پہنچے تھے۔

صدارتی محل میں ابو ظبی کے ولی عہد اور متحدہ عرب امارات کی مسلح افواج کے ڈپٹی سپریم کمانڈر شیخ محمد بن زاید آل نہیان اور یو اے ای کے نائب صدر ، وزیراعظم اور دبئی کے حاکم شیخ محمد بن راشد آل مکتوم اور دوسرے اعلیٰ عہدے داروں نے پاپائے روم کا استقبال کیا۔

پوپ فرانسیس کو عربی گھوڑے کے دستے کے ہمراہ باوقار انداز میں صدارتی محل لایا گیا ۔انھیں اس موقع پر اکیس توپوں کی سلامی دی گئی۔اس کے بعد ویٹی کن اور متحدہ عرب امارات کے ترانے بجائے گئے۔

اس رنگا رنگ تقریب کے بعد پاپائے روم صدارتی محل کے اندر چلے گئے جہاں انھوں نے یو اے ای کی قیادت سے ملاقات کی ۔

پوپ یہ دورہ ایسے وقت میں کررہے ہیں جب متحدہ عرب امارات میں رواداری کا سال منایا جارہا ہے۔ یو اے ای نے 2019ء کو رواداری کا سال قرار دیا ہے۔ رومن کیتھولک کے کسی روحانی پیشوا کا جزیرہ نما عرب کا یہ پہلا دورہ ہے۔پوپ فرانسیس ویٹی کن کا سربراہ بننے کے بعد سے دنیا کے دو بڑے مذاہب عیسائیت اور اسلام کو قریب تر لانے کے لیے کوشاں ہیں۔

پومپیو کی ٹویٹ

دریں اثناء امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے پوپ فرانسیس کے اس دورے کو سراہا ہے اور اس کو مذہبی آزادی کے لیے ایک تاریخی لمحہ قرار دیا ہے۔

انھوں نے ایک ٹویٹ میں لکھا ہے کہ ’’ پوپ کے جزیرہ نما عرب کے اس پہلے دورے سے دنیا کے دو عظیم مذاہب کے درمیان امن اور مفاہمت کو فروغ حاصل ہوگا‘‘۔