.

آواز سے تیزچھوٹا طیارہ صرف چار سال کی دوری پر!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ہوائوں میں اڑنے اور تیز رفتار فضائی سفر میں انسان تیزی کے ساتھ ترقی کی منازل طے کر رہا ہے۔ عالمی کمپنیوں‌ نے آواز سے بھی تیز رفتار میں اڑنے والے ہوائی جہاز تیار کرنے پر کام جاری رکھا ہوا ہے۔ طیارے بنانے والی عالمی کمپنیوں 'بوئنگ' اور Aerion Supersonic نے ایک ایسا ہی چھوٹا طیارہ بنانے پر کام جاری رکھا ہوا ہے جو ایک ہزار میل فی گھنٹہ کی رفتار سے فضاء میں اڑ سکے گا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق'بوئنگ' کمپنی کا کہنا ہے کہ یہ ہوائی جہاز سنہ 2023ء تک تیار کر لیا جائے گا۔ اس ہوائی جہاز کی سب سے بڑی خوبی اس کی تیز رفتاری ہوگی۔ اس کے علاوہ یہ سائز میں چھوٹا اور جدید مواصلاتی آلات سے لیس ہوگا۔

'بوئنگ' نے تیز رفتار طیارہ بنانے کے لیے 'سُپرسونک' کمپنی کے ساتھ مشترکہ معاہدہ کیا مگر اس کی مالی شرائط کی تفصیلات سامنے نہیں لائی گئیں۔

'ہوری زون ایکس' کے ڈپٹی ڈائریکٹر اسٹیو نورلنڈ اور 'بوئنگ نیکسٹ' کے سربراہوں کا کہنا ہے کہ 'بوئنگ' کمپنی فضائی ٹرانسپورٹ کے میدان میں ایک انقلابی دور میں داخل ہو رہی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم دُنیا کے درمیان سفری رابطے کو ایک نئی اور محفوظ جہت سے روش ناس کر رہے ہیں جو ماضی کی نسبت اپنی رفتار میں بہت تیز ہے۔

'ایئریون' کمپنی سنہ 2003ء میں قائم کی گئی تھی۔ اس کا مقصد فضائی نقل وحمل کے میدان میں نئی ایجادات سامنے لانا اور آوازکی رفتار سے تیز ہوائی جہازوں کی تیاری پر کام کرنا تھا۔ یہ کمپنی اب تک ایک تیز رفتار ہوائی جہاز 'ائی ایکس 2' متعارف کرا چکی ہے جس میں 12 سیٹیں ہیں۔ تاہم یہ طیارہ آواز کی رفتار سے زیادہ نہیں۔