.

حزب اللہ اپنے ہتھیاروں سے مخالفین کو’’ گائے‘‘ بنانے میں کامیاب ہوگئی: شہزادہ ترکی الفیصل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی انٹیلی جنس ایجنسی کے سابق سربراہ اور شاہ فیصل مرکز برائے تحقیق اور اسلامی مطالعات کے سربراہ شہزادہ ترکی الفیصل نے العربیہ انگلش سے خصوصی انٹرویو میں کہا ہے کہ حزب اللہ کی بڑھتی ہوئی بالا دستی کے پیش نظر لبنان میں عوام کے ساتھ روابط ایک درست پالیسی ہے۔انھوں نے وضاحت کی ہے کہ حزب اللہ لبنان کے تمام اہلِ تشیع کی نمایندہ نہیں ہے۔

انھوں نے کہا: ’’ حزب اللہ اپنی سفاکیت اور لبنان میں شیعہ کمیونٹی کی منظم مسلح تنظیم ہونے کی وجہ سے اپنے مخالفین کو گائے بنانے میں کامیاب ہوگئی ہے ۔اس صورت حال میں لبنان کے ساتھ روابط برقرار رکھنا بڑی اہمیت کا حامل ہے‘‘۔

وہ اس سوال کا جواب دے رہے تھے کہ حزب اللہ کی ڈی فیکٹو حکمرانی کی وجہ سے لبنان کے ساتھ معاملہ کاری یا اس کا بائیکاٹ ایک درست حکمتِ عملی ہوگی‘‘۔

انھوں نے اس سوال کے جواب میں مزید کہا :’’ اگر لبنانی عوام کی سطح پر روابط استوار کیے جاتے ہیں تو اس سے لبنان کے باقی عرب دنیا کے ساتھ روابط مربوط بنانے میں مدد ملے گی۔ میرے خیال میں لبنان میں شیعہ کمیونٹی کے ساتھ روابط استوار کرنے کا بھی یہ ایک اچھا موقع ہے کیونکہ حزب اللہ لبنان میں تمام اہلِ تشیع کی نمایندہ نہیں ہے‘‘۔

شہزادہ ترکی الفیصل نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ لبنان میں ایسے گروپ اور لوگ موجود ہیں جو حزب اللہ کی بالادستی کی مخالفت کرتے ہیں۔حتیٰ کہ شیعہ کمیونٹی دو حصوں میں منقسم ہے۔ان میں ایک حصہ حزب اللہ کی پیروی کرتا اور اس کا حامی ہے، دوسرا اس کے مؤقف اور کردار کا مخالف ہے ۔