.

زاھدان میں پاسداران انقلاب پر حملہ، تہران میں پاکستانی سفیر کی طلبی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران نے جنوب مشرقی شہر زاھدان میں پاسداران انقلاب کی ایک بس پر ہونے والے خودکش حملے اور 27 پاسداران انقلاب کی ہلاکت کے بعد پاکستانی سفیر کو دفتر خارجہ میں طلب کرکے سخت احتجاج کیا ہے۔

ایران کے خبر رساں ادارے 'تسنیم' کے مطابق تہران میں متعین پاکستان کے سفیر کو گذشتہ ہفتے زاھدان میں پاسداران انقلاب کی ایک بس پر حملے کے حوالے سے طلب کیا گیا اور اس حملے کی پاکستان کے اندر سے کی گئی منصوبہ بندی پر سخت احتجاج کیا گیا۔

خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے زاھدان میں ایران کی طاقتور فورس پاسداران انقلاب کی ایک بس پر حملے میں 27 اہلکار ہلاک اور 13 زخمی ہو گئے تھے۔ اس حملے کی ذمہ داری بلوچ علاحدگی پسند گروپ 'جیش عدل' نے قبول کی تھی۔

ایران کا دعویٰ ہے کہ اس کے صوبہ سیستان بلوچستان میں سرگرم عسکریت پسندوں نے پاکستان میں محفوظ پناہ گاہیں بنا رکھی ہیں اور وہ پاکستان سے ایران کے اندر حملوں کی کارروائیاں کرتے ہیں۔

پاسداران انقلاب کے چیف میجر جنرل محمد علی جعفری نے ہفتے کے روز ایک ٹی وی انٹرویو نے الزام عاید کیا تھا کہ زاھدان حملے میں پاکستانی سیکیورٹی ادارے ملوث ہیں۔ زاھدان میں پاسداران انقلاب کے قافلے پرحملے میں ملوث عناصر کو پاکستانی سیکیورٹی فورسز کی حمایت حاصل تھی۔