خامنہ ای کا یورپی ممالک پر ایران کو دھوکا دینے کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایرانی سپریم لیڈر علی خامنہ ای نے اپنے ملک کی حکومت کو خبردار کیا ہے کہ وہ ایرانی جوہری معاہدے پر دستخط کرنے والے یورپی ممالک کے دھوکے میں نہ آئے۔

امریکا کی علاحدگی کے بعد جوہری معاہدے کے ختم ہو جانے کا خطرہ لاحق ہے۔

سرکاری ٹی وی نے پیر کے روز خامنہ ای کا یہ بیان نشر کیا کہ "ایران کے حوالے سے امریکی عداوت واضح ہے.. ہمارے دشمنوں کے دل میں اسلامی جمہوریہ کی دشمنی بیٹھی ہوئی ہے۔ ہمارے عہدے داران پر لازم ہے کہ وہ یورپیوں کے فریب میں نہ آئیں۔ آپ لوگ یورپیوں سے دھوکا نہ کھائیں"۔

اس سے قبل ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے اتوار کے روز کہا کہ "ایران کے ساتھ تجارت سے متعلق یورپی میکانزم کارگر نہیں ہو پا رہا۔ جرمنی، فرانس اور برطانیہ پر لازم ہے کہ وہ 2015 میں ایران کے ساتھ طے پائے گئے جوہری معاہدے کی پاسداری کے اظہار کے واسطے زیادہ بڑی کوشش کریں"۔

میونخ میں سکیورٹی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ظریف نے کہا کہ اگر یورپ نے امریکی جانب دار بلاک کے خلاف چلنے کا ارادہ کر لیا ہے تو اسے خطرات کا متحمل ہونے کے لیے تیار رہنا چاہیے۔

یاد رہے کہ یورپ کے تین ممالک جرمنی، فرانس اور برطانیہ نے فروری کے اوائل سے ایران کے ساتھ "تجارتی تبادلوں کی سپورٹ" کے واسطے ایک میکانزم پر عمل درامد شروع کیا ہے۔ اس میکانزم کا اعلان یورپی یونین کے رکن ممالک کے وزراء خارجہ کے اجلاس کے ضمن میں کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں