.

سعودی عرب نے اسامہ بن لادن کے بیٹے حمزہ کی سعودی شہریت منسوخ کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کثیر الاشاعت عرب روزنامہ ’’عکاظ‘‘ نے سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے حوالے سے انکشاف کیا ہے کہ ایک شاہی فرمان کے ذریعے القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کے صاحبزادے حمزہ کی سعودی شہریت منسوخ کر دی گئی ہے۔

امریکی حکام نے جمعرات کے روز حمزہ بن لادن کی گرفتاری میں معلومات فراہم کرنے پر ایک ملین ڈالر دینے کا اعلان کیا ہے۔ اسامہ بن لادن کے 20 بچوں میں حمزہ کا 15واں نمبر ہے۔ انہوں نے اسامہ کی تیسری اہلیہ کے بطن سے جنم لیا. انہیں بچین سے ہی اپنے والد کے نقش قدم پر چلنے کی تربیت دی جاتی رہی ہے۔ حمزہ کی پیدائش 1989 میں افغانستان سے روس کے انخلا کے وقت ہوئی۔ وہ 2015 میں القاعدہ کے ترجمان کے طور پر متعدد ویڈیوز میں پیغام دیتے دیکھے گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق امریکا کو خدشہ ہے کہ حمزہ بن لادن القاعدہ کی قیادت اپنے ہاتھ میں لے سکتا ہے کیونکہ تنظیم میں اسے 'ولی عہد الجھاد' کا لقب دیا گیا ہے۔ حمزہ بن لادن کے مصدقہ ٹھکانے کے بارے میں کوئی اطلاعات نہیں تاہم اس کی پاکستان ، افغانستان یا ایران میں جبری نظر بندی کا امکان ظاہر کیا جاتا ہے۔

مئی 2017ء کو امریکی تحقیقاتی ادارے'ایف بی آئی' کے ایک سابق افسر نے امکان ظاہر کیا تھا کہ حمزہ کو القاعدہ کی قیادت سونپی جا سکتی ہے اور وہ اپنے والد کے قتل کا بدلہ لینے کے لیے کچھ بھی کرسکتا ہے۔