.

سوڈان میں 121 برس قبل جاری پہلے ڈاک ٹکٹ کی کہانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یکم مارچ 2019 کو سوڈان میں پہلے ڈاک ٹکٹ کے اجرا اور تقسیم کے 121 برس پورے ہو گئے۔ یکم مارچ 1898 کو سوڈان میں پہلا ڈاک ٹکٹ جاری کیا گیا۔ اس کو "اونٹ" والے ٹکٹ کے نام سے جانا گیا کیوں کہ ٹکٹ پر صحرا میں سفر کرنے والے ایک مسافر کی تصویر پیش کی گئی۔ یہ انگریزوں کے دور (1898 – 1956) میں اونٹ کے ذریعے ڈاک اور خطوط منتقل کرنے کے عمل کی جانب اشارہ تھا۔

مذکورہ ڈاکٹ ٹکٹ کی طباعت لندن میں Thos De La Rue & Co کپمپنی کے توسط سے ہوئی۔ ٹکٹ میں ایک برطانوی کرنل E S Stanton کے ذریعے حقیقی خاکہ پیش کایا گیا۔ ڈاکٹ ٹکٹ کا یہ ڈیزائن 1948 تک استعمال کیا جاتا رہا۔

سوڈان میں پہلا ڈاک خانہ 1867 میں بحر احمر پر واقع شہر سواکن میں کھولا گیا۔ اس کے بعد 1873 میں دنقلا، بربر اور خرطوم میں مزید ڈاک خانوں کا افتتاح دیکھنے میں آیا۔ سال 1877 میں سنار، کرکو، فازوغلی، القضارف، الابیض، الفاشر اور پھر فشودہ میں بھی ڈاک خانوں کا قیام عمل میں لایا گیا۔ تاہم 1881 میں شروع ہونے والی مہدی انقلابی تحریک کے نتیجے میں 1884 تک ڈاک کے یہ دفاتر بند ہو گئے۔ جنوری 1885 میں خرطوم میں سوڈانی فورسز کے داخلے کے بعد ملک سے غیر ملکیوں کا انخلا عمل میں آیا۔

سال 1896 تک سوڈان ڈاک کی خدمات سے محروم رہا۔ بعد ازاں انگریز قابض حکام کی جانب سے سوڈان میں ڈاک کی خدمات کی واپسی کے لیے مہم کا آغاز کیا گیا۔ اس دوران کوئی مقامی ٹکٹ استعمال نہیں کیا گیا۔ سال 1897 تک مصری ٹکٹوں کو ہی استعمال کیا گیا۔ اس سے قبل سواکن میں محدود تعداد میں انگریزی ٹکٹوں کو بھی استعمال کیا گیا اور ساحلی علاقوں میں تو ہندوستانی ٹکٹوں کو بھی استعمال کیا گیا۔

یکم مارچ 1897 کو مصری ڈاک ٹکٹوں کو تقسیم کیا گیا۔ اس پر فرانسیسی اور عربی زبانوں میں سوڈان کا نام تحریر تھا۔ یہ ٹکٹ ڈاک خانوں کے اندر مختلف قیمتوں کے ساتھ فروخت کیا گیا۔

اس کے ایک برس بعد اونٹ والا ٹکٹ پہلا سوڈانی ڈاک ٹکٹ تھا جو مقامی جگہ کی شناخت کا حامل تھا اور اس نے صحرائی علاقے کے جمال کو اجا گر کیا۔