.

یورپی یونین نے سعودی عرب کو بلیک لسٹ کرنے کی تجویز مسترد کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یورپی یونین کے رکن ممالک نے متفقہ طور پر سعودی عرب اورامریکا کے چار علاقوں کو دہشت گردی کے لیے رقوم اور منی لانڈرنگ پر نرم کنٹرول کے پیش نظر بلیک لسٹ قرار دینے کی تجویز مسترد کردی ہے۔

یورپی یونین کی انتظامی باڈی یورپی کمیشن نے سعودی عرب کو ’’ہائی رسک‘‘ ملک قرار دینے کی تجویز پیش کی تھی لیکن سعودی عرب نے اس کے خلاف موثر انداز میں مہم چلائی اور لابی کی ہے۔

یورپی یونین کے رکن ممالک کے نمایندوں نے جمعہ کو برسلز میں اس معاملے پر غور کے بعد اب ایک بیان سے اتفاق کیا ہے ۔ تنظیم کے انصاف اور داخلہ امور کے وزراء جمعرات کو اس کی منظوری دیں گے۔

رائیٹرز کے مطابق ا س بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’ ہم موجودہ تجویز کی حمایت نہیں کرسکتے ۔یہ ایک شفاف اور قابلِ اعتبار عمل کے بعد تیار نہیں کی گئی ہے۔اس سے متاثرہ ممالک کی فیصلہ کن اقدام کے لیے حوصلہ افزائی نہیں ہوتی ہے جبکہ ان کے موقف کی سماعت کے حق کا احترام بھی نہیں کیا گیا ہے۔

امریکا کے محکمہ خزانہ نے بھی یورپی یونین کی تجویز کی مخالفت کی ہے اور کہا ہے کہ اس میں چار امریکی علاقوں کو شامل کرنے کا عمل سقم زدہ ہے اور اپنے علاقوں سامو آ ، امریکی آئلینڈ ، پیورٹو ریکو اور گوام کو اس فہرست میں شامل کرنے کی تجویز مسترد کرتا ہے۔